Friday, 18 August 2017

Why Punjabi Military Dictator Zia under Abuse, Blame, and Criticism?

Muhajir General Iskandar Mirza was first defense minister of Pakistan and he was a pioneer of involving Military in political affairs of Pakistan as Governor-General of Pakistan.

Pathan Ayoub Khan, Pathan Yahya Khan were Military Dictators and they created an atmosphere for separation of Bengal.

Muhajir Musharraf was also a Military Dictator in Pakistan and he facilitated and sponsored militancy and terrorism in Pakistan, for preventing his military rule and to support American interests in Afghanistan and Pakistan.

Punjabi Zia-ul-Haque was also a Military Dictator in Pakistan. He saved the nation from bloodshed which was going to take place due to the rigged election of 1977 held by PPP under the premiership of Z.A Bhutto. He defeated U.S.S.R, an enemy of Pakistan and friend of India. He has not lost a single inch of Pakistanis land. He brought stability by crushing insurgencies in Baluchistan, Sindh, and KPK. He made Pakistan a nuclear state. He saved Pakistan from internal and external enemies.

But, usually, Punjabi Military Dictator Zia-ul-Haque is abused, blamed and criticized for Military Rule in Pakistan. Why? Because General Zia-ul-Haque was a Punjabi?

Thursday, 17 August 2017

مسلم لیگ ن اور پاک فوج کے ادارے کو آپس میں لڑوانے کی سازش ھو رھی ھے۔

پاکستان کی 60٪ آبادی پنجابی ھے۔ اس لیے پاک فوج میں بھی سب سے زیادہ تعداد پنجابیوں کی ھے جبکہ پاکستان کی قومی اسمبلی کی 60٪ نشستیں پنجاب میں ھونے کی وجہ سے پنجاب کی صوبائی حکومت کے علاوہ پاکستان کی وفاقی حکومت بھی پنجابیوں کی سیاسی پارٹی مسلم لیگ ن کی ھے۔

ن لیگ کے قائد نواز شریف کو 2013 میں اقتدار سمبھالتے ھی غیر سیاسی اور غیر جمہوری طریقے سے اقتدار سے نکالنے کی کوششیں ھو رھی تھیں۔ فوجی مداخلت کی بھی کوشش کروائی گئی لیکن پاک فوج کے ادارے نے جمہوری سیاسی حکومت کو ھٹانے کی سازش کا حصہ بننے سے خود کو بچائے رکھا۔

نواز شریف کو سپریم کورٹ سے نا اھل کرواکر وزیرِ اعظم کے عہدے سے فارغ کروایا جا چکا ھے لیکن یہ سازش کا ایک حصہ ھے۔ اصل سازش یہ ھے کہ پنجابیوں کی سیاسی پارٹی مسلم لیگ ن اور پاک فوج کے ادارے کو آپس میں لڑوایا جائے۔ الیکٹرونک میڈیا کے کچھ اینکر ' کچھ تجزیہ نگار اور کچھ سیاستدان جو خود کو پاک فوج کے ادارے کا خود ساختہ ترجمان ظاھر کرنے کی کوشش کرتے ھیں اور کچھ پاک فوج کے ادارے سے ریٹارڈ تجزیہ نگار دانستہ یا نادانستہ اس سازش کا حصہ بنتے جارھے ھیں۔

امید ھے کہ پنجابیوں کی سیاسی پارٹی مسلم لیگ ن اور پاک فوج کے ادارے کو آپس میں لڑوانے کی سازش ناکام رھے گی۔ جبکہ نواز شریف بھی وزیرِ اعظم کے عہدے سے سپریم کورٹ سے نا اھل ھونے کے باوجود پاک فوج کے ادارے یا سپریم کورٹ کے ادارے سے محاذآرائی کے بجائے سازشی شخصیات تک اپنا ردِ عمل رکھے گا۔

اگر پاک فوج کا ادارہ بھی پاک فوج کے ادارے کے خود ساختہ ترجمان ظاھر کرنے والے عناصر سے باز پرس کرے تو پنجابیوں کی سیاسی پارٹی مسلم لیگ ن اور پاک فوج کے ادارے کو آپس میں لڑوا کر پنجابیوں کو آپس میں لڑوانے کی سازش مکمل طور پر ناکام ھوجانی ھے۔

Wednesday, 16 August 2017

17th August, Radcliffe Award Day, Punjabi Holocaust Day.

On 15 July 1947, the Indian Independence Act 1947 of the Parliament of the United Kingdom stipulated that British rule in India would come to an end just one month later, on 15 August 1947. The Act also stipulated the partition of the Provinces of British India into two new sovereign dominions: the Union of India and the Dominion of Pakistan. Pakistan was intended as a Muslim homeland, while the Union of India remained secular. Muslim-majority British provinces in the north were to become the foundation of Pakistan. The provinces of Baluchistan (91.8% Muslim before partition) and Sindh (72.7%) were granted entirely to Pakistan. However, two provinces did not have an overwhelming majority—Bengal in the north-east (54.4% Muslim) and the Punjab in the north-west (55.7% Muslim). The western part of the Punjab became part of West Pakistan and the eastern part became the Indian state of East Punjab, which was later divided between a smaller Punjab State and two other states. Bengal was also partitioned, into East Bengal (in Pakistan) and West Bengal (in India). The North-West Frontier Province (whose borders with Afghanistan had earlier been demarcated by the Durand Line) voted in a referendum to join Pakistan. This controversial referendum was boycotted by the most popular Pukhtun movement in the province at that time. The area is now a province in Pakistan called Khyber Pakhtunkhwa.

The Punjab's population distribution was such that there was no line that could neatly divide Muslim Punjabis, Hindu Punjabis, and Sikh Punjabis. Likewise, no line could appease the Muslim League, headed by Jinnah, and the Indian National Congress led by Jawaharlal Nehru and Vallabhbhai Patel, and by the British. Moreover, any division based on religious communities was sure to entail "cutting through road and rail communications, irrigation schemes, electric power systems and even individual landholdings." However, a well-drawn line could minimize the separation of farmers from their fields, and also minimize the numbers of people who might feel forced to relocate.

The Secretary of State responded by directing Lord Wavell to send 'actual proposals for defining genuine Muslim areas'. The task fell on V. P. Menon, the Reforms Commissioner, and his colleague Sir B. N. Rau in the Reforms Office. They prepared a note called "Demarcation of Pakistan Areas", where they defined the western zone of Pakistan as consisting of Sindh, N.W.F.P., British Baluchistan and three western divisions of Punjab (Rawalpindi, Multan, and Lahore). However, they noted that this allocation would leave 2.2 million Sikh Punjabis in the Pakistan area and about 1.5 million in India. Excluding the Amritsar and Gurdaspur districts of the Lahore Division from Pakistan would put a majority of Sikh Punjabis in India. (Amritsar had a non-Muslim Punjabi majority and Gurdaspur a marginal Muslim Punjabi majority.) To compensate for the exclusion of the Gurdaspur district, they included the entire Dinajpur district in the eastern zone of Pakistan, which similarly had a marginal Muslim Punjabi majority.

After receiving comments from John Thorne, a member of the Executive Council in charge of Home affairs, Wavell forwarded the proposal to the Secretary of State. He justified the exclusion of the Amritsar district because of its sacredness to the Sikh Punjabis and that of Gurdaspur district because it had to go with Amritsar for 'geographical reasons'. The Secretary of State commended the proposal and forwarded it to the India and Burma Committee, saying, "I do not think that any better division than the one the Viceroy proposes is likely to be found".

In June 1947, Britain appointed Sir Cyril Radcliffe to chair Boundary Commissions. The Commission was instructed to "demarcate the boundaries of the two parts of the Punjab on the basis of ascertaining the contiguous majority areas of Muslim Punjabis and non-Muslim Punjabis. In doing so, it will also take into account other factors." Other factors were undefined, giving Radcliffe leeway, but included decisions regarding "natural boundaries, communications, watercourses and irrigation systems", as well as socio-political consideration. Each commission also had 4 representatives—2 from the Indian National Congress and 2 from the Muslim League. Given the deadlock between the interests of the two sides and their rancorous relationship, the final decision was essentially Radcliffe's.

After arriving in India on 8 July 1947, Radcliffe was given just five weeks to decide on a border. He soon met with his fellow college alumnus Mountbatten and traveled to Lahore to meet with commission members, chiefly Nehru from the Congress and Jinnah, president of the Muslim League. He objected to the short time frame, but all parties were insistent that the line should be finished by the 15 August British withdrawal from India. Mountbatten had accepted the post as Viceroy on the condition of an early deadline. The decision was completed just a couple of days before the withdrawal, but due to political maneuvering, not published until 17 August 1947, two days after the grant of independence to India and Pakistan.

Boundary commission consisted of 5 people – a chairman (Radcliffe), 2 members nominated by the Indian National Congress and 2 members nominated by the Muslim League. Before his appointment, Radcliffe had never visited India and knew no one there. To the British and the feuding politicians alike, this neutrality was looked upon as an asset; he was considered to be unbiased toward any of the parties, except of course Britain. Only his private secretary, Christopher Beaumont, was familiar with the administration and life in the Punjab. Wanting to preserve the appearance of impartiality, Radcliffe also kept his distance from Viceroy Mountbatten.

No amount of knowledge could produce a line that would completely avoid conflict; already, "sectarian riots in Punjab dimmed hopes for a quick and dignified British withdrawal". "Many of the seeds of postcolonial disorder in South Asia were sown much earlier, in a century and half of direct and indirect British control of large part of the region, but, as a book, after the book has demonstrated, nothing in the complex tragedy of partition was inevitable."

Radcliffe justified the casual division with the truism that no matter what he did, people would suffer. The thinking behind this justification may never be known since Radcliffe "destroyed all his papers before he left India". He departed on Independence Day itself before even the boundary awards were distributed. By his own admission, Radcliffe was heavily influenced by his lack of fitness for the Indian climate and his eagerness to depart India.

The implementation was no less hasty than the process of drawing the border. On 16 August 1947 at 5:00 pm, the Indian and Pakistani representatives were given two hours to study copies, before the Radcliffe award was published on the 17th August 1947. To avoid disputes and delays, the division was done in secret. The final Awards were ready on 9 August, but not published until two days after the partition. According to Reading, there is some circumstantial evidence that Nehru and Patel were secretly informed of the Punjab Award's contents on August 9 or 10, either through Mountbatten or Radcliffe's Indian assistant secretary.

After the partition of India, the fledgling governments of India and Pakistan were left with all responsibility to implement the border. After visiting Lahore in August, Viceroy Mountbatten hastily arranged a Punjab Boundary Force to keep the peace around Lahore, but 50,000 men were not enough to prevent thousands of killings, 77% of which were in the rural areas. Given the size of the territory, the force amounted to less than one soldier per square mile. This was not enough to protect the cities much less the caravans of the hundreds of thousands of refugees who were fleeing their new homes.

After the partition of Punjab, some 20 million people left their homes and set out by every means possible—by train, and road, in cars and lorries, in buses and bullock carts, but most of all on foot—to seek refuge with their own kind." Many of them were slaughtered by an opposing side, some starved or died of exhaustion, while others were afflicted with "cholera, dysentery, and all those other diseases that afflict undernourished refugees everywhere". Estimates of the number of people who died range between 200,000 (official British estimate at the time) and in the riots which preceded the partition in the Punjab region, about 2 Million people were killed in the retributive genocide. The Time Magazine of September 1947 gave killing static around one million people. However, it was the largest genocide after the Second World War. UNHCR estimates 14 million Muslim Punjabis, Hindu Punjabis, Sikh Punjabis were displaced during the partition; However, it was the largest mass migration in human history too.

Was it the creation of the Dominions of Pakistan and India or it was the Destruction of Punjab?

Was it the creation of the Dominions of Pakistan and India or it was the Elimination of Punjab nation?

Both India and Pakistan were loath to violate the agreement by supporting the rebellions of villages drawn on the wrong side of the border, as this could prompt a loss of face on the international stage and require the British or the UN to intervene. Border conflicts led to three wars, in 1947, 1965, and 1971, and the Kargil conflict of 1999.

Monday, 14 August 2017

کیا اب پاکستان میں مارشل لاء نافذ نہیں ھوگا؟

پاکستان کے 1947 میں قیام سے لیکر 1958 تک 11 سال کے عرصے کے لیے پاکستان میں جمہوری سیاست کا دور رھا اور پاکستان کی حکمراں جماعت مسلم لیگ رھی لیکن؛

جنرل ایوب خان نے پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے کنونشل لیگ کے نام سے سیاسی جماعت بنائی جو بہت کامیاب رھی اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلوائی لیکن بد قسمتی سے ایوب خان کے پاکستان کا اقتدار چھوڑنے کی وجہ سے کنونشل لیگ کو زوال کا سامنا کرنا پڑ گیا۔ ویسے جنرل ایوب خان کی پاکستان پر 1958 سے لیکر 1969 تک 11 سال کے عرصے کے لیے حکومت رھی۔ جبکہ 1969 سے لیکر 1971 تک 2 سال کے عرصے کے لیے جنرل یحیٰ خان نے پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے حکومت کی لیکن سیاسی جماعت بنانے کی زحمت نہیں کی ورنہ جنرل یحیٰ خان کی بنائی ھوئی سیاسی جماعت بھی بہت کامیاب رھتی اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلواتی۔ 1971 سے لیکر 1977 تک کے 6 سال کے عرصے کے لیے پاکستان میں جمہوری سیاست کا دور رھا اور پی پی پی کو پاکستان پر حکومت کرنے کا موقعہ مل گیا۔

جنرل ضیاء الحق نے پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے جونیجو لیگ کے نام سے سیاسی جماعت بنائی جو بہت کامیاب رھی اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلوائی لیکن بد قسمتی سے ضیاء الحق کے جہاز کے حادثے میں مارے جانے کی وجہ سے جونیجو لیگ کو زوال کا سامنا کرنا پڑ گیا۔ ویسے جنرل ضیاء الحق کی پاکستان پر 1977 سے لیکر 1988 تک 11 سال کے عرصے کے لیے حکومت رھی۔ 1988 سے لیکر 1999 تک کے 11 سال کے عرصے کے لیے پاکستان میں جمہوری سیاست کا دور رھا اور 1988 سے لیکر 1990 تک پی پی پی کو ' 1990 سے لیکر 1993 تک ن لیگ کو ' پھر 1993 سے لیکر 1996 تک پی پی پی کو ' 1997 سے لیکر 1999 تک ن لیگ کو پاکستان پر حکومت کرنے کا موقعہ مل گیا۔

جنرل پرویز مشرف نے پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے ق لیگ کے نام سے سیاسی جماعت بنائی جو بہت کامیاب رھی اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلوائی لیکن بد قسمتی سے پرویز مشرف کے پاکستان کا اقتدار چھوڑنے کی وجہ سے ق لیگ کو زوال کا سامنا کرنا پڑ گیا۔ ویسے جنرل پرویز مشرف کی پاکستان پر 1999 سے لیکر 2008 تک 9 سال کے عرصے کے لیے حکومت رھی۔ 2008 سے لیکر 2017 تک کے 9 سال کے عرصے کے لیے پہلے 2008 سے لیکر 2013 تک پی پی پی کو اور اب 2013 سے لیکر ن لیگ کو پاکستان پر حکومت کرنے کا موقعہ ملا ھوا ھے۔

پاکستان میں جمہوری اور فوجی حکومتوں کے دورانیے کا اگر جائزہ لیا جائے تو اب جنرل قمر جاوید باجوہ کا پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے کسی مناسب نام سے سیاسی جماعت بنانے کی باری ھے۔ جنرل قمر جاوید باجوہ کی بنائی ھوئی سیاسی جماعت بھی بہت کامیاب رھے گی اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلوائے گی۔ جبکہ جنرل قمر جاوید باجوہ کی پاکستان پر تقریبا 10 سال تک کے عرصے کے لیے حکومت رھے گی۔ لیکن جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ھے کہ؛ پاکستان آئین اور قانون کے راستے پر چل پڑا ھے۔ اس سے مراد کیا لیا جائے؟ کیا اب پاکستان میں مارشل لاء نافذ کرکے کسی مناسب نام سے سیاسی جماعت نہیں بنائی جائے گی جو بہت کامیاب رھے اور پاکستان کی حکمراں جماعت کہلوائے؟ اگر اب پاکستان میں مارشل لاء نافذ نہیں ھوگا تو پھر انکا کیا بنے گا جو پاکستان میں جمہوری کے بعد فوجی حکومت کے دورانیے کے منتظر ھیں؟

پاکستان آئین اور قانون کے راستے پر چل پڑا ھے۔ جنرل قمر جاوید باجوہ

پاکستان کے چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ھے کہ؛ پاکستان آئین اور قانون کے راستے پر چل پڑا ھے۔ اس بیان سے تو ظاھر ھوتا ھے کہ؛

دوبار پاکستان کا آئین توڑنے والا ' بھگوڑا کمانڈو ' ھندوستانی مھاجر ' ریٹائرڈ جنرل مشرف ' جو پاکستان کے چیف آف آرمی اسٹاف کے عہدے سے ریٹائر ھونے کے بعد اب آل پاکستان مسلم لیگ کے نام سے سیاسی جماعت بناکر اس سیاسی جماعت کا سربراہ بنا ھوا ھے اور بار بار کہتا بھی رھتا ھے اور کوشش بھی کرتا رھتا ھے کہ تمام ھندوستانی مھاجروں کو ایک چھتری کے نیچے متحد ھونا چاھیئے۔ اس کا پاکستان کے آئین کو توڑنے کا مقدمہ پاکستان کی سپریم کورٹ میں زیرِ سماعت ھے ' اسے اب فوری طور پر بیرونِ ملک سے پکڑ کر واپس پاکستان لایا جائے گا اور آئین کی خلاف ورزی کے جرم میں پھانسی پر لٹکایا جائے گا۔ جبکہ سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف کو صادق اور امین نہ ھونے کی بنیاد پر قومی اسمبلی کی رکنیت سے نا اھل کرنے ' نواز شریف کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو نواز شریف کے خلاف مقدمات کا 6 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرنے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرنے کے عمل کے بعد سپریم کورٹ کی طرف سے آئین کی بالادستی اور سب کے ساتھ یکساں انصاف کی مثال قائم کرنے کے لیے ضروری ھے کہ؛

1۔ سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف کو صادق اور امین نہ ھونے کی بنیاد پر قومی اسمبلی کی رکنیت سے نا اھل کرنے کے بعد پاکستان کی قومی اسمبلی ' پاکستان کی سینٹ اور صوبائی اسمبلیوں کے اراکین کے صادق اور امین ھونے یا نہ ھونے کی تحقیقات کے لیے جے آئی ٹی قائم کرکے صادق اور امین نہ ھونے والے اراکین کو بھی رکنیت سے نا اھل قرار دے۔

2۔ سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف سے پہلے پاکستان کا وزیرِ اعظم رھنے والے راجہ پرویز اشرف کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو راجہ پرویز اشرف کے خلاف مقدمات کا 5 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

3۔ سپریم کورٹ کی طرف سے راجہ پرویز اشرف سے پہلے پاکستان کا وزیرِ اعظم رھنے والے یوسف رضا گیلانی  کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو یوسف رضا گیلانی  کے خلاف مقدمات کا 4 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

4۔ سپریم کورٹ کی طرف سے یوسف رضا گیلانی  کے دور سے پاکستان کا صدر رھنے والے آصف زرداری  کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو آصف زرداری  کے خلاف مقدمات کا 3 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

5۔ سپریم کورٹ کی طرف سے آصف زرداری سے پہلے پاکستان کا صدر رھنے والے اور پاکستان کا آئین معطل کرکے پاکستان کی حکومت کو برطرف کرکے پاکستان کے اقتدار پر قبضہ کرنے والے جنرل پرویز مشرف کے خلاف بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے ' آئین کے آرٹیکل 6 اور دیگر مقدمات کی سماعت کرنے والی عدالتوں کو 2 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

THE HUR MOVEMENT OF SINDH (1930- 43)

Research on Hur Movement
MANZOOR H. KURESHI, Karachi, Sindh

The Hur movement (1930-43) is one of the most important chapters that has played a most vital role in the history of Sindh. Therefore in order to assess its impact on the pre and post independence period of modern Sindh, not only the Hur movement but the reign of two alien powers (Talpurs and British) who governed it through 19th and almost half of 20th Century also required exhaustive analysis with an eye of impartiality.

The Talpurs were a Baloch tribe from Baluchistan, soldiering in the native Kalhoras armed forces. After overthrowing their masters (1783), Talpurs turned Sindh as their personal fief which they divided into various branches of their families. Their triarchy ruled in a fashion of laissez-faire medieval monarchs, more engrossed in hunting than providing rule of law to the populace. Almost all fertile lands were either converted into royal hunting meadows or doled out to loyal clans serving in the state army. During their rule, the condition of masses, in general, was extremely miserable, to say the least.

When British conquered Sindh (1843), they brought with them various new concepts and enlightened ideas of welfare state already applied in Europe since 18th Century. They introduced modern education, the latest system of administration and justice; revenue and communication; the concept of planned cities on the basis of which they built Karachi post city. They not only developed roads and extensive railway infrastructure in shortest possible time, linking remotest places with main cities but also built Lloyd Barrage (1932), World’s greatest irrigation system. The lands of Sindh which were mostly dependent on seasonal rainfall, overflow of non-perennial Indus or few small size canals, now provided with a network of Canals irrigating about 5 millions of acres hitherto virgin lands. Even the credit of developing alphabets of modern Sindhi language goes to Sir Henry Bartle Edward Frere, then Commissioner of Sindh (1857). The institutions and infrastructure built by the British in 19th and beginning of 20th Century; were so sturdy and effective that despite total apathy shown to them subsequently are still catering to the needs of people.

The Hur revolt started during the middle of the colonial period. Although this period was more benevolent, especially after East India Company was replaced by Crown (1858), which not only transformed the disposition of Sindh from medieval to modern but at the same time witnessed hectic developmental activities, carried out by the administration for the general welfare of the public. This aspect needs to be analyzed.

Whereas upshot of Hur Movement was martial law imposed on lower Sindh and shifting of thousands nonlocal ex-servicemen and Mari and Bugti tribal families who were given incentives by allotting to them thousands of acres fertile lands in Nara Valley and reclaimed forest lands of ‘Mukhi forest’ hotbed of stiff resistance, as a permanent settlement. This policy changed the socio-political milieu as well as the demography of Sindh forever. The colossal socioeconomic damage, as well as political damage, caused to the people of Sindh, in the long run, an outcome of the confrontation with a far superior adversary; the British Empire also need to be examined by the scholars, when Hur Movement is made subject to in-depth research.

Courtesy: The Letters to the Editor, Daily Dawn Karachi

فیس بک تے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن لئی 6 زون تے زون آرگنائزر بنا دتے گئے نے۔

قوم پرستی دا مشن شعور نوں بیدار کیتے بغیر ' ٹیم ورک کیتے بغیر ' قوم پرستاں نوں حکومتی طاقت دوائے بغیر پورا نئیں ھو سکدا۔ ایس لئی؛

پنجابی قوم پرستی دا پہلا مرحلہ فیس بک دے ذریعے پنجابیاں دا پنجاب ' پنجابیاں ' پنجابی زبان ' پنجابی تہذیب ' پنجابی ثقافت بارے شعور ودھانا سی۔ ایس تے پچھلے 5 سال توں کم ھو رے آ سی۔

پنجابی قوم پرستی دا دوسرا مرحلہ اناں پنجابیاں نوں کٹھا کرکے ' جنہاں پنجابیاں دا پنجاب ' پنجابیاں ' پنجابی زبان ' پنجابی تہذیب ' پنجابی ثقافت بارے شعور ودھ چکیا اے ' پنجابی قوم پرستی دا کم کرن لئی ٹیماں بنا کے فیس بک تے پنجابی قوم پرستی دا کم کرنا اے۔ ایس تے ھن کم شروع کر دتا گے آ اے تے 2020 تک کم پورا ھو جاوے گا۔ انشاء اللہ

پنجابی قوم پرستی دا تیسرا مرحلہ پنجابی قوم پرستاں نوں سنیٹر ' قومی اسمبلی دے میمبر ' صوبائی اسمبلی دے میمبر ' وزیر ' مشیر بنوانا تے سرکاری اداریاں وچ ذمہ دار عہدیاں تک اپڑاناں اے۔ ایس تے 2020 توں کم شروع ھووے گا۔ انشاء اللہ۔ ھجے سارے پاکستان وچ فیس بک دے ذریعے پنجابی قوم پرست تے کٹھے ھوکے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن والے تیار کیتے جا رئے نے۔

فیس بک تے پاکستان لیول تے کٹھے ھوکے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن لئی 6 زون بنا دتے گئے نے۔

1۔ وسطی پنجاب تے شمالی پنجاب زون وچ پنجابی زبان نوں اردو زبان دی بالادستی توں ' پنجابیاں نوں اردو بولن والے ھندوستانی آں دی آں سازشاں توں تے اردو بولن والے پنجابی آں نوں اردو دی غلامی توں فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال نجات دلان لئی وسطی پنجاب تے شمالی پنجاب زون دا آرگنائزر Atif Shahzad نوں بنایا گیا اے۔

2 . کراچی زون وچ پنجابیاں نال ھون والے ظلم تے زیادتی آں دا فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال مقابلہ کرن لئی کراچی زون دا آرگنائزر Saleem Ilyas نوں بنایا گیا اے۔

3 . جنوبی پنجاب زون وچ ھون والی سرائیکی شازش دا فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال مقابلہ کرن لئی جنوبی پنجاب زون دا آرگنائزر Zia Aslam نوں بنایا گیا اے۔

4 . سندھ زون وچ پنجابیاں نال ھون والے ظلم تے زیادتی آں دا فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال مقابلہ کرن لئی سندھ زون دا آرگنائزر Iqbal Maher نوں بنایا گیا اے۔

5 . بلوچستان دے بلوچ علاقے دے زون وچ پنجابیاں نال ھون والے ظلم تے زیادتی آں دا فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال مقابلہ کرن لئی بلوچستان دے بلوچ علاقے دے زون دا آرگنائزر
Mansoor Ahmad نوں بنایا اے۔

6 . بلوچستان دے پشتون علاقے تے خیبر پختونخواہ دے پختون علاقے دے زون وچ پنجابیاں نال ھون والے ظلم تے زیادتی آں دا فیس بک دے ذریعے ' علمی طریقے تے سیاسی حکمت عملی نال مقابلہ کرن لئی بلوچستان دے پشتون علاقے تے خیبر پختونخواہ دے پختون علاقے دے زون دا آرگنائزر
Rajpoot Zulfiqar نوں بنایا اے۔

جیہڑے جیہڑے پنجابی ' جیس جیس زون وچ فیس بک دے ذریعے کم کرنا چان ' او اپنے اپنے زون دے آرگنائزر نال رابطہ کرن نالے اے گل یاد رکھن کہ کوئی وی کم کلے آں نئیں ھوندا پر کم بوھتے بندے کٹھے کرن نال وی نئیں ھوندا۔ کم صحیح پروگرام بنان توں بعد اوس پروگرام تے عمل کرن دی صلاحیت رکھن والے بندے آں دے خلوص نال محنت کرن نال ای ھوندا اے۔

2020 تک فیس بک دے ذریعے کٹھے ھوکے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن والے صرف 1000 پنجابی قوم پرست تیار کرنے نے تاکہ او پنجابی قوم پرست اپنے اپنے علاقے وچ پنجابیاں دا ایس طراں پنجابی قوم پرست بن کے کیس لڑ سکن جداں وکیل اپنے موکل دا کیس لڑدا اے۔

قوم پرست اپنی قوم دا سیاسی شعور ودھاندا اے تاکہ قوم دے حقاں دا دفاع کرن والی سوچ نوں جگائے۔ کیونکہ قوم پرست قوم دے لوکاں ' قوم دی زبان ' قوم دی تہذیب ' قوم دی ثقافت ' قوم دی زمین دے نال محبت کردا اے۔

قوم پرست اپنی قوم دی زمین ' قوم دی ثقافت ' قوم دی تہذیب ' قوم دی زبان ' قوم دے لوکاں دے مفادات دی حفاظت کردا اے۔ ایس لئی قوم پرست ' قوم دے لوکاں ' قوم دی زبان ' قوم دی تہذیب ' قوم دی ثقافت ' قوم دی زمین دے مفاد دے لئے اپنے آپ نوں وقف کر دیندا اے۔

قوم پرست ' قوم دا اک وکیل ھوندا اے۔ ایس لئی قوم پرست اپنی قوم دی زمین ' قوم دی ثقافت ' قوم دی تہذیب ' قوم دی زبان ' قوم دے لوکاں دے حقاں دا دفاع کردا اے۔

پنجابیاں نوں چائی دا اے کہ پنجابی قوم پرستاں دی عزت کریا کرن۔ پنجابی قوم پرستاں دا ھتھ ونڈایا کرن۔ پنجابی قوم پرستاں دا ساتھ دے آ کرن۔

فیس بک دے ذریعے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن دے " قوائد تے ضوابط "۔

ھر پنجابی نوں فیس بک دے ذریعے کٹھے ھوکے پنجابی قوم پرستی دا کم کردے ھوئیاں اناں "قوائد تے ضوابط" دا خیال رکھنا ھووے گا۔

01۔ ھر پنجابی صرف اک زون وچ ای فیس بک دے ذریعے کم کرے گا تاکہ جیس زون دا کم کرے ' اوس زون دے پنجابیاں دے مسئلے آں تے ریسرچ کرے کہ؛
(الف) ۔ اوس دے علاقے دے پنجابیاں تے کی ظلم تے زیادتی آں ھو رئیاں نے؟
(ب) ۔ اناں ظلم تے زیادتی آں دی وجہ کی اے؟
(پ) ۔ او ظلم تے زیادتی آں کر کون رے آ اے؟
(ت) ۔ انا ظلم تے زیادتی آں دا حل کی اے؟
(ٹ) ۔ اناں ظلم تے زیادتی آں تے مضمون لکھے یا لکھے ھوئے مضموناں نوں اگے پنجابیاں تک اپڑائے۔

02۔ ھر پنجابی اپنے زون دے پنجابی قوم پرستی دا کم کرن والے پنجابی آں نال فیس بک دے ذریعے رابطہ کرکے سانجھ ودھاوے گا۔

03۔ ھر زون والا پنجابی فیس بک دے ذریعے اپنے اپنے زون دا کم کرے گا البتہ دوسرے زون والے آں دے مضموناں تے کمنٹ کر سکے گا پر زون دے آرگنائزر دی زون بارے پالیسی فالو کرنی پووے گی۔ کیونکہ اک زون والا پنجابی دوجے زون والے پنجابی دے زون دی پالیسی نال اختلاف نئیں کرے گا۔

04۔ اک زون دا آرگنائزر دوجے زون دے آرگنائزراں نال فیس بک دے ذریعے رابطہ رکھے گا تاکہ آپس وچ اک دوجے نال تعاون کیتا جا سکے تے اک دوجے کولوں اپنے زون لئی مدد لے دے سکے۔

05۔ ھر زون دا آرگنائزر فیس بک دے ذریعے اپنے میمبراں تون علاوہ 10 میمبراں دی مجلسِ عاملہ بنا کے اناں نال صلاح کرکے اپنے اپنے زون دی پالیسی تے سیاسی چالاں طے کرے گا۔

06۔ ھر زون دا آرگنائزر صرف 100 ' 100 میمبر بنائے گا تے 2019 تک 6 زوناں دے ٹوٹل 600 میمبر بنن گے۔

07۔ 2019 تک فیس بک دے ذریعے 6 زون منظم کرن توں بعد 2 زون 2019 وچ پاکستان توں بار رین والے پنجابیاں لئی بنن گے تے اناں دے 200 ممبر بن جان گے۔

08۔ 2019 تک پنجابی قوم پرستی دا کم کرن والے قوم پرستیاں نال تعان کرن والے پاکستان لیول دے پنجابی ادیباں ' صحافیاں تے سیاسیات دے پروفیسراں ' سماجیات دے پروفیسراں ' نفسیات دے پروفیسراں ' تاریخ دے پروفیسراں ' معاشیات دے پروفیسراں ' بین الاقوامی تعلقات دے پروفیسراں چوں 100 میمبر بنائے جان گے۔

09۔ 2019 تک پنجابی قوم پرستی دا کم کرن والے قوم پرستیاں نال تعان کرن والے پاکستان دی سول سروسز ' فارن افیئر سروسز ' ملٹری سروسز توں ریٹارڈ اعلیٰ افسران ' صنعتکاراں ' تاجراں چوں 100 میمبر بنائے جان گے۔

10۔ ھر زون دے پنجابی اپنے اپنے علاقے دا کیس لڑن لئی ایس بلاگ چوں اپنے اپنے علاقے بارے لکھے ھوئے مضمون لبھ کے اناں مضموناں نوں اپنی وال تے پوسٹ کردے رین گے تے اناں مضموناں چوں مواد لے کے آپ وی ھور مضمون لکھدے رین گے تاکہ پنجابیاں وچ قوم پرستی دا شعور ودھے۔ https://pthinker.blogspot.com

Sunday, 13 August 2017

پنجابی قوم پاکستان کا یومِ آزادی 14 اگست کو منائیں یا 17 اگست کو منائیں؟

پاکستان کا قیام " 3 جون 1947 کے کیبنٹ مشن" کی سفارشات کے بعد برطانیہ کی پارلیمنٹ کے " انڈین انڈیپنڈنس ایکٹ 1947" کے تحت پر امن طور پر وجود میں آیا۔جب 14 اگست 1947 کو پاکستان اور 15 اگست 1947 کو بھارت کے قیام کا اعلان کیا گیا تو اس وقت پنجاب نہ پاکستان میں تھا اور نہ بھارت میں۔ پاکستان کے قیام کے 3 دن کے بعد 17 اگست 1947 کو پنجابیوں کو بتایا گیا کہ پنجاب کے کون سے اضلاع پاکستان میں شامل کردیے گئے ھیں اور کون سے اضلاع بھارت میں شامل کردیے گئے ھیں۔ بلکہ یہ بھی بتایا گیا کہ پاکستان کا گورنر جنرل سندھی محمد علی جناح اور پاکستان کا وزیرِ اعظم اترپردیش کے اردو بولنے والے ھندوستانی لیاقت علی خاں کو بنا دیا گیا ھے۔

17 اگست 1947 کو پنجاب کو تقسیم کرکے 17 مسلم پنجابی اکثریتی اضلاع پاکستان میں شامل کردیے گئے اور 12 ھندو پنجابی و سکھ پنجابی اکثریتی اضلاع بھارت میں شامل کردیے گئے۔ پنجاب کی تقسیم کی وجہ سے مسلمان پنجابیوں ' ھندو پنجابیوں اور سکھ پنجابیوں کو نقل مکانی کرنی پڑی۔ جسکی وجہ سے مار دھاڑ ' لوٹ مار اور قتل و غارتگری کا سلسلہ شروع ھوا؛ جس میں 20 لاکھ پنجابی مارے گئے۔ جو کہ تاریخ میں دنیا کی مختصر وقت میں سب سے بڑی قتل و غارتگری قرار دی جاتی ھے۔ جبکہ 2 کروڑ پنجابیوں نے نقل مکانی کی۔ جو کہ تاریخ میں دنیا کی مختصر وقت میں سب سے بڑی نقل مکانی قرار دی جاتی ھے۔

1947 میں پنجابی قوم کو مذھب کی بنیاد پر تقسیم کروا کر ' 20 لاکھ پنجابی مروا کر اور 2 کروڑ پنجابی بے گھر کروا کر ' پنجاب کو تقسیم کروانے کے بعد اب پنجابی قوم اور پنجاب کے دشمن ان سازشوں میں مصروف رھتے ھیں کہ پنجابی قوم کو مزید تقسیم کرنے کے لیے پنجابی قوم کو برادریوں ' علاقوں اور لہجوں کی بنیاد پر بھی تقسیم کیا جائے۔ لیکن اب پنجابی قوم؛ نہ تو ارائیں ' اعوان ' بٹ ' جٹ ' راجپوت ' شیخ ' گجر ' وغیرہ برادروں کی بنیاد پر تقسیم ھوگی۔ نہ پنجابی قوم  امرتسری ' انبالوی ' بٹالوی '   بھاولپوری ' پشوری ' جالندھری ' جہلمی ' سیالکوٹی ' فیصل آبادی ' کشمیری ' گرداسپور ی ' لدھیانوی ' ملتانی  ' ھوشیارپوری ' فیروزپوری ' لاھوری ' وغیرہ علاقوں کی بنیاد پر تقسیم ھوگی۔ نہ پنجابی قوم پوادی ' پوٹھوھاری ' تھلوچی ' جھنگچوی ' ھندکو ' دھنی ' دوآبی ' ڈوگری ' ڈیرہ والی ' ریاستی ' شاھپوری ' ماجھی ' مالوی '   ملتانی ' وغیرہ لہجوں کی بنیاد پر تقسیم ھوگی۔

مذھبی بنیاد پر تقسیم ھونے کے بعد اب پنجابیوں کا برادریوں ' علاقوں اور لہجوں کی بنیاد پر مزید تقسیم ھونے کا نہیں بلکہ پنجابیوں  کے متحد ھونے ' پنجابی قوم کے مستحکم ھونے اور پنجاب کے ترقی کرنے کا دور ھے۔ انشا اللہ۔ پنجابی کی آبادی پاکستان کی 60٪ آبادی ھے۔ اس لیے؛ پنجابیوں کے متحد ھونے ' پنجابی قوم کے مستحکم ھونے اور پنجاب کے ترقی کرنے کا مطلب پاکستان کی مظبوطی اور خوشحالی ھے۔ لیکن مسئلہ یہ ھے کہ؛ پنجابی قوم پاکستان کا یومِ آزادی 14 اگست کو منائیں یا 17 اگست کو منائیں؟

کیا پنجابی قوم کا اردو زبان کی غلامی کا نشہ کبھی اتر پائے گا؟

جب تک اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجروں اور اردو زبان کا تسلط لاھور پر قائم رھے گا ' اس وقت تک پنجاب اور پنجابی قوم کو اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجروں کی زبان ' ثقافت ' تہذیب اور مزاج کے مطابق ھی زندگی گذارنی پڑے گی۔

پنجابیوں کو ان اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجروں کی یاری اور اردو زبان کی غلامی کا نشہ اس قدر راس آگیا ھے کہ اب ان کی پنجابی غیرت بھی ھوش و حواس میں آنے پر تیار نہیں۔

ان پنجابیوں کو سمجھ ھی نہیں آتا کہ جو قوم اپنی زبان ' تہذیب اور ثقافت تک کو بھول جائے ' جو قوم زمین ' زبان ' تہذیب اور ثقافت کے لیے جدوجہد کرنے اور قربانیاں دینے والے اپنے سورمائوں کی قدر نہ کرے ' وہ قوم احسان فراموش بن جاتی ھے اور احسان فراموش زندہ تو رھتے ھیں لیکن بغیر عزت و آبرو کے۔

پنجاب میں ھندوستانی مھاجر اصل فساد کی جڑ ھیں. پنجابی قوم کے لیے میٹھا زھر ھیں. پنجاب میں ھندوستانی مھاجروں کے ساتھ وہ ھی سلوک پنجابیوں کو کرنا چاھیئے جیسا سلوک کراچی میں پنجابیوں کے ساتھ ھندوستانی مھاجر کرتے ھیں.

نواز شریف کی نا اھلی کے بعد پاکستان کی فوج کے ادارے کی مشکلات بڑہ گئی ھیں۔

سپریم کورٹ کا بنچ ' کیس پانامہ کا سن رھا تھا ' فیصلہ اقامہ کا سنا دیا۔ سپریم کورٹ کا بنچ اگر پانامہ کیس تک محدود رھتا اور اقامہ کا مسئلہ الیکشن کمیشن یا ھائیکورٹ کو بھیج دیتا ' جیسے پانامہ کا کیس نیب کورٹ کو بھیجا ' تو پاکستان میں سیاسی انتشار اور حکومتی بحران پیدا نہ ھوتا۔ معزز جج حضرات نے نواز شریف کو نا اھل قرار دینے کے ساتھ ساتھ گریبی میں گاڈ فادر اور سسلی مافیا کے خطاب دے کر نواز شریف کو بے تاج بادشاہ بھی قرار دے دیا۔ سوچنے کی بات ھے کہ؛ گاڈ فادر اور سسلی مافیا کیا وزاتِ اعظمیٰ کا محتاج تھا یا وزائے اعظم گاڈ فادر اور سسلی مافیا کے محتاج تھے؟ سیاسی رھنماؤں کو سیاست کے میدان میں سیاسی مقابلہ کے ذریعے عوام کی حمایت سے محروم کیا جاتا ھے ' عدالتی فیصلوں کے ذریعے یا انتظامی اختیارات کے استعمال کے ذریعے سیاسی رھنما کو عوام کی حمایت سے محروم کرنا ناقابلِ عمل ھے۔ عدالتی فیصلے سے نواز شریف وزیرِ اعظم کے طور پر نا اھل ھوگیا اور ن لیگ کی صدارت سے بھی محروم ھونا پڑے گا لیکن اسکے باوجود مزید عدالتی فیصلوں کے ذریعے بھی نواز شریف کو پنجاب کی عوام کی اکثریت کی حمایت سے محروم اور سیاست کے میدان سے باھر نہیں کیا جا سکتا۔ بلکہ ن لیگ کے عام رھنما تو اپنی جگہ اگر چوھدری نثار اور شھباز شریف بھی ن لیگ سے الگ ھوجاتے ھیں تو چوھدری نثار اور شھباز شریف کی پنجاب کی عوام میں اھمیت ختم ھوجانی ھے لیکن نواز شریف سے پنجاب کی عوام کی اکثریت نے الگ نہیں ھونا۔

اب زیادہ سے زیادہ نواز شریف کو نیب کے کیسوں میں گرفتار کیا جا سکتا ھے اور عدالت نواز شریف کی ضمانت رد کرسکتی ھے لیکن اس سے زیادہ عدالت بھی کچھ نہیں کرسکتی کیونکہ عدالت زیادہ سے زیادہ نواز شریف کو سزا سنا سکتی ھے لیکن جیل میں نہیں رکھ سکتی۔ وجہ یہ ھے کہ پاکستان کے صدر کے پاس آئین کے آرٹیکل 45 کے تحت عدالت سے سنائی گئی سزا کو معاف کرنے کا اختیار ھے۔ کیا عدالت نواز شریف کو سزا سناتی رھے گی اور پاکستان کا صدر سزا معاف کرتا رھے گا؟ اس لیے نواز شریف کو سیاست کے میدان سے باھر کرنے کا آخری طریقہ پاکستان میں مارشل لاء کا نفاذ ھے لیکن مارشل لاء کے نفاذ کے بعد پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کو پاکستان کے دفائی کے ساتھ ساتھ پاکستان کے خارجی اور داخلی معاملات ' پاکستان کی عوام کے مسائل اور پاکستان کے صوبوں کی شکایات کو کنٹرول میں رکھنا پڑے گا۔ جبکہ نواز شریف کی سیاسی مخالفت کو بھی کنٹرول کرنا پڑے گا۔ جوکہ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کے بس کی بات نظر نہیں آتی۔ میرے تجزیئے کے مطابق نواز شریف کی سپریم کورٹ سے نا اھلی میں ادارے کی حیثیت سے پاکستان کی فوج کا کوئی کردار نہیں ھے۔ البتہ پرویز مشرف اور شجاع پاشا جیسے ریٹارڈ جنرل ضرور شامل تھے۔ بلکہ نواز شریف کی سپریم کورٹ سے وزیرِ اعظم کے طور پر نا اھلی کے بعد پاکستان کی فوج کے ادارے کے لیے مشکلات بہت زیادہ بڑہ گئی ھیں۔

جب تندور گرم ھوتا ھے تو پڑوسی بھی روٹیاں لگا لیتے ھیں۔ نواز شریف کے پنجاب کی عوام کے مقبول ترین سیاسی رھنما ھونے کی وجہ سے نواز شریف کی وزیرِ اعظم کے طور پر نا اھلی کے بعد پنجاب میں سیاست کا تندور گرم ھوگیا ھے۔ اس لیے اب یہ ناممکن ھے کہ؛ پڑوسی روٹیاں نہ لگائیں۔ بلکہ پنجاب میں گرم ھونے والے سیاست کے تندور پر تو لگتا ھے کہ؛ امریکہ ' چین اور روس نے بھی روٹیاں لگانے والوں میں شامل ھو جانا ھے۔ جبکہ سیاست کے تندور کو زیادہ دیر تک اور زیادہ گرم رکھنے کے لیے کچھ نے تو تندور میں ایندھن بھی ڈالنا شروع کر دینا ھے۔ دراصل پاکستان میں " نیو گریٹ گیم " کا کھیل اپنے عروج پر ھے۔ پاکستان میں اس کھیل کے اھم کھلاڑی امریکہ ' چین ' پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ ' نواز شریف ' پرویز مشرف ' آصف زرداری ' عمران خان ھیں۔ پرویز مشرف ' آصف زرداری ' عمران خان واضح طور پر امریکن کیمپ کی طرف سے کھیل کھیل رھے ھیں۔ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ اور نواز شریف کے واضح طور پر امریکن کیمپ یا چینی کیمپ کی طرف سے کھیل کھیلنے کا فیصلہ کرنے تک اب پاکستان میں سیاسی انتشار میں روز با روز اضافہ ھوتا جانا ھے۔ 

پاکستان اور پاکستان کے عوام کے مفاد میں تو بہتر یہ ھی تھا کہ وزیرِ اعظم ھوتے ھوئے نواز شریف اور پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ باھمی مشاورت کے ساتھ واضح طور پر امریکن یا چینی کیمپ میں جانے کا فیصلہ کرتے۔ لیکن نواز شریف کے وزیرِ اعظم کے طور پر برطرفی کے بعد جو صورتحال پیدا ھو چکی ھے ' اسکے بعد زیادہ امکانات تو یہ ھی ھیں کہ اب نواز شریف اور پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ واضح طور پر امریکن یا چینی کیمپ میں جانے کا فیصلہ اپنے اپنے طور پر کریں گے۔ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ اور ن لیگ کے قائد نواز شریف کے پاکستان کے قومی کھلاڑی ھونے کی وجہ سے الگ الگ کیمپ میں جانے کی صورت میں پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ اور ن لیگ کے قائد نواز شریف کے درمیان ٹکراؤ ھوگا جس سے نقصان پاکستان اور پاکستان کے عوام کا ھوگا۔ جبکہ ایک ھی کیمپ میں جانے کی صورت میں پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ اور ن لیگ کے قائد نواز شریف کے درمیان باھمی تعاون کا طریقہ کار بلآخر طے کرنا ھی پڑنا ھے۔

اس وقت الیکٹرونک میڈیا پر اینکرز ' تجزیہ نگار اور کچھ سیاستدان یہ جملہ بار بار دھرا رھے ھیں کہ؛ نواز شریف بتاتا کیوں نہیں کہ نواز شریف کو وزاتِ اعظمیٰ سے ھٹانے کی سازش کس نے کی؟ اسکا آسان اور سادہ سا جواب یہ ھے کہ؛ وزیرِ اعظم نواز شریف کے خلاف سازش وہ کر رھے تھے ' جنہوں نے الیکٹرونک میڈیا پر اینکرز ' تجزیہ نگاروں اور کچھ سیاستدانوں کو وزیرِ اعظم نواز شریف کی کردار کشی کرنے کے لیے غیبت ' تہمت اور بہتام تراشی کا ٹھیکہ دیا ھوا تھا اور یہ بھی تاثر دینے کی کوشش ھو رھی تھی کہ؛ دراصل پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کی آشیر باد سے یہ کام ھو رھا ھے۔ مقصد اس ٹھیکے کا ن لیگ کے عام رکن اور پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کے عام رکن کے درمیان ٹکراؤ کا ماحول قائم کرنا تھا۔ میرے تجزیے کے مطابق پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کی آشیر باد سے یہ کام نہیں ھو رھا تھا۔ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ یہ کیوں چاھتی کہ؛ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کے عام رکن اور ن لیگ کے عام رکن کے درمیان ٹکراؤ کا ماحول قائم ھو؟ اس لیے ھی الیکٹرونک میڈیا پر اینکرز تجزیہ نگاروں اور کچھ سیاستدانوں کی طرف سے ایک تو وزیرِ اعظم نواز شریف کی کردار کشی کی جارھی تھی۔ دوسرا پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کو بدنام کیا جا رھا تھا۔ اصل میں وزیرِ اعظم نواز شریف کی کردار کشی کا ٹھیکہ دینے والے ایک تیر سے دو شکار کر رھے تھے۔ بظاھر انکا نشانہ وزیرِ اعظم نواز شریف کو بدنام کرنا تھا لیکن انکا اصل نشانہ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کو بدنام کرنا تھا۔ جب نواز شریف پاکستان کا وزیرِ اعظم تھا تو الیکٹرونک میڈیا پر اینکرز ' تجزیہ نگاروں اور کچھ سیاستدانوں کے پاس وزیرِ اعظم نواز شریف کی کردار کشی کرنے کے لیے غیبت ' تہمت اور بہتام تراشی کا ٹھیکہ تھا۔ اب سپریم کورٹ کے بینچ کی طرف سے نواز شریف کو پاکستان کے وزیرِ اعظم کے طور پر نا اھل قرار دینے کے بعد انہی اینکرز ' تجزیہ نگاروں اور سیاستدانوں کو نواز شریف کو مشورے دینے کا ٹھیکہ دیا جائے گا کہ نواز شریف یہ کریں اور یہ نہ کریں بلکہ یہ بھی کہا جائے گا کہ نواز شریف یہ کیوں کر رھا ھے اور یہ کیوں نہیں کر رھا؟

پاکستان کی موجودہ سیاسی صورتحال کے تناظر میں نواز شریف کو زیرو ھونے کے بجائے ھیرو بننے جبکہ پاکستان کی آرمی اسٹیبلشمنٹ کے عام رکن اور ن لیگ کے عام رکن کے درمیان ٹکراؤ کا ماحول قائم نہ ھونے دینے کے لیے پاکستان مسلم لیگ ن کا قائد بن کر درج ذیل 3 کام کرنے پڑیں گے؛

1۔ حکومتی اور سیاسی امور کو الگ الگ کردے۔ وفاقی اور صوبائی وزرا کے پاس پارٹی کے عہدے نہ ھوں اور پارٹی کے عہدیداروں کو وزیر نہ بنائے۔ پاکستان کی وفاقی ' پنجاب ' بلوچستان ' گلگت بلتستان اور کشمیر کی حکومتوں کو اپنے اپنے حکومتی امور انجام دینے دے۔ تمام وفاقی اور صوبائی وزرا کو اپنے اپنے محکموں میں با اختیار بناکر خود وزرا کی کارکردگی کا جائزہ لیا کرے۔ وفاقی وزرا اپنے محکمے کی کارکردگی کے لیے پاکستان مسلم لیگ ن کے مرکزی عہدیداروں کے سامنے جوابدہ ھوں۔ صوبائی وزرا اپنے محکمے کی کارکردگی کے لیے پاکستان مسلم لیگ ن کے صوبائی عہدیداروں کے سامنے جوابدہ ھوں۔ ضلعی حکومتوں کے سربراھان اپنی ضلعی حکومت کی کارکردگی کے لیے پاکستان مسلم لیگ ن کے ضلعی عہدیداروں کے سامنے جوابدہ ھوں۔

2۔ پاکستان مسلم لیگ ن کو پاکستان کی سطح پر ' صوبوں کی سطح پر اور ضلعوں کی سطح پر منظم کرے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے مرکزی عہدیدار پاکستان کی سطح کے انتظامی ' اقتصادی ' معاشی اور سماجی مسائل کے بارے پروگرام اور پالیسی بناکر متعلقہ محکموں کے وزیروں کو عمل درآمد کے لیے دیں۔ جس پر حکومتی قوائد و ضوابط کے مطابق متعلقہ محکمے کے وزیر کے صوابدیدی اختیار یا وفاقی کابینہ کی منظوری یا قومی اسمبلی سے قانون سازی کے بعد عمل درآمد کیا جائے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے صوبائی عہدیدار اپنے اپنے صوبے کے انتظامی ' اقتصادی ' معاشی اور سماجی مسائل کے بارے پروگرام اور پالیسی بناکر متعلقہ محکموں کے وزیروں کو عمل درآمد کے لیے دیں۔ جس پر حکومتی قوائد و ضوابط کے مطابق متعلقہ محکمے کے وزیر کے صوابدیدی اختیار یا صوبائی کابینہ کی منظوری یا صوبائی اسمبلی سے قانون سازی کے بعد عمل درآمد کیا جائے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے ضلعی عہدیدار اپنے اپنے ضلعے کے انتظامی ' اقتصادی ' معاشی اور سماجی مسائل کے بارے پروگرام اور پالیسی بناکر ضلعی حکومت کے سربراہ کو عمل درآمد کے لیے دیں۔ جس پر حکومتی قوائد و ضوابط کے مطابق ضلعی حکومت کے سربراہ کے صوابدیدی اختیار یا ضلع کونسل کی منظوری کے بعد عمل درآمد کیا جائے۔

3۔ نواز شریف خود مارچ 2018 تک کے لیے رائیونڈ میں قیام کرے جہاں 3 بجے سے لیکر 5 بجے تک پیر کے روز پنجاب ' منگل کے روز سندھ ' بدہ کے روز بلوچستان ' جمعرات کے روز خیبر پختونخواہ ' جمعہ کے روز گلگت بلتستان ' سنیچر کے روز کشمیر سے آنے والے پاکستان مسلم لیگ ن کے ورکروں اور عام شہریوں سے اجتماعی ملاقات کیا کرے۔ صبح اور رات کے اوقات میں وفاقی و صوبائی وزرا ' قومی و صوبائی اسمبلیوں کے اراکین ' پاکستان مسلم لیگ ن کے عہدیداروں ' دیگر سیاسی جماعتوں کے رھنماؤں ' ملکی و غیر ملکی شخصیات و وفود سے پہلے سے طے شدہ اجتماعی اور انفرادی ملاقاتیں کیا کرے اور اپنے مقدمات کے بارے وکلا کے ساتھ قانونی صلاح و مشورہ کیا کرے۔ جبکہ اتوار کا دن اپنے گھریلو امور انجام دے اور اپنا وقت اپنے عزیز و اقارب کے ساتھ گذارے۔

Friday, 11 August 2017

سپریم کورٹ کی طرف سے آئین کی بالادستی اور یکساں انصاف کی مثال قائم ھونی چاھیئے۔

سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف کو صادق اور امین نہ ھونے کی بنیاد پر قومی اسمبلی کی رکنیت سے نا اھل کرنے ' نواز شریف کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو نواز شریف کے خلاف مقدمات کا 6 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرنے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرنے کے عمل کے بعد سپریم کورٹ کی طرف سے آئین کی بالادستی اور سب کے ساتھ یکساں انصاف کی مثال قائم کرنے کے لیے ضروری ھے کہ؛

1۔ سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف کو صادق اور امین نہ ھونے کی بنیاد پر قومی اسمبلی کی رکنیت سے نا اھل کرنے کے بعد پاکستان کی قومی اسمبلی ' پاکستان کی سینٹ اور صوبائی اسمبلیوں کے اراکین کے صادق اور امین ھونے یا نہ ھونے کی تحقیقات کے لیے جے آئی ٹی قائم کرکے صادق اور امین نہ ھونے والے اراکین کو بھی رکنیت سے نا اھل قرار دے۔

2۔ سپریم کورٹ کی طرف سے نواز شریف سے پہلے پاکستان کا وزیرِ اعظم رھنے والے راجہ پرویز اشرف کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو راجہ پرویز اشرف کے خلاف مقدمات کا 5 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

3۔ سپریم کورٹ کی طرف سے راجہ پرویز اشرف سے پہلے پاکستان کا وزیرِ اعظم رھنے والے یوسف رضا گیلانی  کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو یوسف رضا گیلانی  کے خلاف مقدمات کا 4 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

4۔ سپریم کورٹ کی طرف سے یوسف رضا گیلانی  کے دور سے پاکستان کا صدر رھنے والے آصف زرداری  کے خلاف نیب کی طرف سے بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے اور نیب کی عدالت کو آصف زرداری  کے خلاف مقدمات کا 3 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

5۔ سپریم کورٹ کی طرف سے آصف زرداری سے پہلے پاکستان کا صدر رھنے والے اور پاکستان کا آئین معطل کرکے پاکستان کی حکومت کو برطرف کرکے پاکستان کے اقتدار پر قبضہ کرنے والے جنرل پرویز مشرف کے خلاف بند کیے جانے والے کیس دوبارہ کھولنے ' آئین کے آرٹیکل 6 اور دیگر مقدمات کی سماعت کرنے والی عدالتوں کو 2 ماہ میں فیصلہ دینے کا پابند کرے اور اس عمل کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کا جج نامزد کرے۔

6۔ پاکستان کا آئین معطل کرکے پاکستان کی حکومت کو برطرف کرکے پاکستان کے اقتدار پر قبضہ کرنے والے جنرل پرویز مشرف کے دور میں غیر آئینی طور پر پی سی او کے تحت ھائی کورٹوں اور سپریم کورٹ کا جج بننے والے ججوں کو آئینی طور پر اھل جج نہ ھونا قرار دے کر ایک ماہ میں نا اھل قرار دے۔