Sunday, 6 August 2017

پاکستان کے حالات کون سا رخ اختیار کر سکتے ھیں؟

ھندوستان کئی دھائیوں سے افغانستان اور سینٹرل ایشن ممالک تک پنہچنے کے درینہ منصوبے پر عمل درآمد کے لیے پاکستان کے جنوبی علاقے سے راستہ بننانے میں مصروف رھا ھے۔ جسکے لیے پنجاب مخالف ھر عمل میں بڑہ چڑہ کر حصہ لیتا رھا ھے۔ ماضی میں ' پاکستان کے قیام کے بعد سے لیکر ھندوستان کو اس منصوبے پر عمل درآمد کے لیے روس کا اشتراک حاصل رھا لیکن امریکہ کو چونکہ روس کو گرم پانی تک پہنچنے سے روکنے کے لیے روس کو افغانستان میں ھی روکنا تھا۔ جسکے لیے امریکہ کو مظبوط پنجاب کی ضرورت تھی۔ اس لئے ھندوستانی منصوبہ تو پایا تکمیل تک نہ پہنچ پایا لیکن ھندوستان کی آشیرباد بحرحال پردہ درپردہ ان پنجاب مخالف عناصر کو ملتی ھی رھی۔

موجودہ حالات میں چونکہ امریکہ ھندوستان کے تعاون سے روس کے ساتھ ساتھ چین کو بھی گرم پانی تک پہنچنے سے روکنا چاھتا ھے۔ جسکے لیے پنجاب تعاون کرنے پر تیار نہیں۔ اسلیے کمزور پنجاب اور ھندوستان کے افغانستان اور سینٹرل ایشن ممالک تک پہنچنے کا درینہ منصوبہ امریکہ کے مفاد میں ھے۔ اسلیے ھندوستانی عزائم کو امریکن آشیرباد بھی حاصل ھے۔ جسکی وجہ سے نہ صرف ھندوستان بلکہ امریکہ بھی پنجاب مخالف ھر عمل میں بڑہ چڑہ کر حصہ لے رھا ھے۔ جس سے پنجاب کو سرائیکی سازش یا جنوبی پنجاب کے نام پر تقسیم کروا کر یا پنجاب میں مذھبی اور فرقہ وارانہ فساد کرواکر' پنجاب میں خانہ جنگی کی صورت پیدا کرکے پنجابی قوم کو سیاسی ' سماجی' معاشی اور انتظامی مشکلات میں مبتلا کرنے کے خواھشمند عناصر کو خاص طور پر سہولت اور تقویت مل رھی ھے لیکن چین اور روس کا مفاد اس کے برعکس ھے۔

یونائٹڈ نیشن کے افغانستان سے انخلا کے بعد اب افغانستان اور پاکستان میں ایک نیا کھیل شروع ھوچکا ھے۔ اس کھیل میں پنجابی قوم کا کردار فیصلہ کن ھوگا جبکہ امریکہ کے پاس چار آپشن ھیں۔

1۔ یونائٹڈ نیشن کی طرح امریکہ بھی افغانستان کو چھوڑ چھاڑ کر واپس چلا جائے لیکن اس صورت میں روس پھر سے افغانستان میں اپنے قدم جمانے کے بعد گرم پانیوں تک پہنچنے کے اپنے درینہ منصوبے پر عمل درآمد شروع کردے گا۔ اس لیے اس آپشن پر تو امریکہ نے عمل کیا نہیں اور نہ مستقبل قریب میں عمل کرنے کے امکانات ھیں۔

2۔ امریکہ یونائٹڈ نیشن کے جانے کے باوجود بھی افغانستان ھی میں رھے اور یونائٹڈ نیشن کے بغیر ھی افغانستان میں اپنی پروردہ حکومت بنا کر اپنا مشن جاری رکھے۔ جیسا کہ اس وقت امریکہ کر بھی رھا ھے لیکن پاکستان کی مدد کے بغیر افغانستان میں امریکہ کا قدم جما کر رھنا بھی مشکل ھوتا جارھا ھے اور چین کے گرم پانی تک پہنچنے کی راہ میں رکاوٹیں بھی کھڑی نہیں کر پا رھا۔

3۔ امریکہ ' افغانستان میں قدم جما کر رھنے اور خاص طور پر پاکستان کے ساتھ چین کے کاشغر سے لیکر گوادر تک اکنامک کوریڈورز کے منصوبوں کے معاھدات کے بعد افغانستان میں اپنی پروردہ حکومت کے ساتھ ساتھ پاکستان میں بھی اپنی پروردہ حکومت بنا کر پنجاب کو سرائیکی سازش یا جنوبی پنجاب کے نام پر تقسیم کروا کر یا پنجاب میں مذھبی اور فرقہ وارانہ فساد کرواکر یا پنجاب میں سیاسی نظریات کی بنیاد پر عدمِ استحکام کروا کر پنجاب میں خانہ جنگی کی صورت پیدا کرکے پنجابی قوم کو سیاسی ' سماجی' معاشی اور انتظامی مشکلات میں مبتلا کرنے کے بعد کراچی کے اردو بولنے والے ھندوستانی مہاجروں کے ذریعے کراچی کو پاکستان سے الگ کرکے فری پورٹ بنوائے اور بلوچوں کے ذریعے بلوچستان کو آزاد ملک بنا کر وھاں اپنے اڈے بنائے جہاں سے افغانستان میں اپنی پروردہ حکومت کو کمک پہنچا کر روس کا راستہ بھی روکے اور چین کے راستہ میں روکاوٹیں بھی کھڑی کرے تاکہ گوادر اور چین کے درمیان کا راستہ چین کی دسترس سے دور اور امریکہ کے کنٹرول میں رھے۔ آثار سے ظاھر ھوتا ھے کہ امریکہ نے اس منصوبے پر عمل تیز کر دیا ھے۔

4۔ امریکہ پنجاب کو تقسیم کروانے کی کوششیں کرنے یا پنجاب میں مذھبی اور فرقہ وارانہ فساد کرواکر یا پنجاب میں سیاسی نظریات کی بنیاد پر عدمِ استحکام کروا کر اور مہاجر' پٹھان و بلوچ کو پنجابی قوم کے خلاف محاذآرائی پر اکسا کر سیاسی ' سماجی' معاشی اور انتظامی مساِئل میں مبتلا کرنے کے بجائے بلوچستان کے بلوچ اور خیبر پختونخواہ کے پختون علاقوں میں پنجاب کے پنجابیوں کو امریکہ' روس اور چین کے گرم پانی کے کھیل سے دور رکھنے کے لیے کشمیر اور ھندوستانی پنجاب کو ھندوستان سے آزادی دلوا کر کشمیر' ھندوستانی پنجاب' پاکستانی پنجاب' سندھ اور کراچی پر مشتمل گریٹر پنجاب بننانے کی راہ پر ڈالنے کے ساتھ ساتھ بلوچستان کے بلوچ اور خیبر پختونخواہ کے پختون علاقوں سے دستبردار ھونے پر راضی کرے۔ اگر امریکہ کے بجائے روس اور چین نے گرم پانی تک پہنچنے کے لیے پنجابی قوم کی پشت پناھی شروع کردی اور کشمیر کے ساتھ ساتھ ھندوستانی پنجاب کو بھی ھندوستان سے آزادی دلوا کر پاکستانی پنجاب کے ساتھ ملا کر ایک بار پھر سے دھلی سے لیکر پشاور اور کشمیر سے لیکر کشمور تک کے اصل پنجاب کو ایک کر دیا تو نہ امریکہ کی پنجاب کو تقسیم کروانے کی کوششیں کام آئیں گی اور نہ مہاجر' پٹھان و بلوچ کو پنجابی قوم کے خلاف محاذآرائی پر اکسا کر سیاسی ' سماجی' معاشی اور انتظامی مساِئل میں مبتلا کرنے کی سازشیں رنگ دکھائیں گی بلکہ ھندوستان کو آشیرباد دے دے کر پاکستان کو آنکھیں دکھانے کے کام پر لگانے کا خمیازہ بھی الٹا ھندوستان کو ھی بھگتنا پڑے گا جبکہ بلوچستان کے بلوچ اور خیبر پختونخواہ کے پختون علاقے بھی پنجاب ھی کے ساتھ رھیں گے ' جس سے پاکستان چھوٹا اور کمزور ھونے کے بجائے مزید وسیع اور مظبوط ھوجائے گا- اس صورتحال میں امریکہ کسی حال میں بھی روس اور چین کو گرم پانی تک پہنچنے سے نہیں روک پائے گا۔