Friday, 15 June 2018

یوپی سی پی کی اشرافیہ نے کراچی پر قبضہ کیا ھوا ھے

کراچی منی پاکستان ھے۔ پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی ' یوپی سی پی ' بہاری ' گجراتی ' راجستھانی برادریاں کراچی کی بڑی بڑی برادریاں ھیں۔ کراچی کا عام پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی ' یوپی سی پی ' بہاری ' گجراتی ' راجستھانی محبِ وطن اور محنت کش ھے۔ اپنے گھربار اور کاروبار میں مصروف رھتا ھے۔ اس لیے اب ابہام کا خاتمہ ضروری ھے کہ؛ ایم کیو ایم کراچی کی نمائندہ جماعت ھے یا کراچی کے مھاجروں کی نمائندہ جماعت ھے؟

کراچی والے اور کراچی کے مھاجر میں زمین آسمان کا فرق ھے۔ کراچی والے صرف مھاجر نہیں بلکہ کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی بھی ھیں۔ جبکہ کراچی کے مھاجر صرف کراچی کے ' یوپی سی پی ' بہاری ' گجراتی ' راجستھانی ھیں۔ یو پی ' سی پی کے اردو بولنے والے ہندوستانی مھاجروں کو بتانا چاھیئے کہ؛ ان کا پاکستان سے کیا واسطہ؟ یہ کس قانون کے تحت پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' بلوچ کی زمین پر آکر آباد ھوئے؟

یوپی سی پی کی اشرافیہ کو مہاجروں کی احساسِ محرومی کا رونا بند کرکے اب کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کی کراچی میں احساسِ محرومی ختم کرنا ھوگی۔ کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کو کراچی میں عزت اور سکون کے ساتھ زندگی گذارنے کا حق دینا ھوگا۔

ایم کیو ایم کو وجود میں لاکراور مھاجر کی بنیاد پر لسانی جذبات کو فروغ دیکر جس طرح 1986 سے یوپی سی پی کی اشرافیہ نے کراچی پر اپنا قبضہ کیا ھوا ھے اور کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کو یرغمال بنایا ھوا ھے ویسے ھی اگر کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی نے متحد ھوکر غیر مھاجر کی بنیاد پر لسانی جذبات کو فروغ دیکر سیاست کا کرنا شروع کردی تو پھر کراچی کا سیاسی اور سماجی ماحول کیا بنے گا؟

کراچی میں مھاجر کی اکثریت کراچی کے صرف 2 اضلاع کراچی سینٹرل اور کورنگی میں ھے جبکہ کراچی کے 4 اضلاع کراچی ساؤتھ ' کراچی ویسٹ ' کراچی ایسٹ اور ملیر میں اکثریت پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کی ھے۔ یوپی سی پی کی اشرافیہ اگر کراچی پر قبضے اور کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کو یرغمال بنائے رکھنے کے لیے مھاجر کی بنیاد پر لسانی جذبات کو فروغ دیکر سیاست اور دھشتگردی کر رھی ھے تو کیا کراچی کے پنجابی ' سندھی ' پٹھان ' ھندکو ' بلوچ ' بروھی ' کشمیری ' گلگتی بلتستانی ' چترالی کو بھی حق حاصل ھے کہ وہ یوپی سی پی کی اشرافیہ کے یرغمال سے خود کو نکالنے اور کراچی میں اپنے سماجی ' سیاسی ' معاشی حقوق کے حصول اور تحفظ کے لیے خود کو غیر مھاجر کی بنیاد متحد کرکے اور لسانی جذبات کو فروغ دیکر سیاست کرنا شروع کردے؟ 

مسلماناں نوں نکی عید دی آں ڈھیر ودھائیاں

پہلی وڈی زبان عربی
دوجی وڈی زبان بنگالی
تیجی وڈی زبان پنجابی
چوتھی وڈی زبان جاوانی
پنجویں وڈی زبان ترکی
چھیویں وڈی زبان فارسی
ستویں وڈی زبان پشتو
اٹھویں وڈی زبان اردو
نویں وڈی زبان سندانی
دسویں وڈی زبان ازبک
تے دوجیاں زباناں بولن والے
مسلماناں نوں نکی عید دی آں ڈھیر ودھائیاں

دوستو !!! میرے مضمون لکھن دا مقصد کی اے؟

بندے نوں اپنے لئی وی کجھ کرنا پیندا اے۔ اپنے گھر والے آں تے محلہ داراں لئی وی۔ اپنے خاندان تے اپنے علاقے لئی وی۔ اپنی برادی تے اپنے صوبے لئی وی۔ اپنی قوم تے اپنے ملک لئی وی۔ اے جسمانی طور تے وی کرنا پیندا اے۔ مالی طور تے وی کرنا پیندا اے۔ علمی طور تے وی کرنا پیندا اے پر کرنا اونا ای پیندا اے جیس حساب نال اللہ نے توفیق دتی ھووے۔ نہ اللہ دی دتی ھوئی توفیق توں گھٹ کرنا چائی دا اے تے نہ ای اللہ دی دتی ھوئی توفیق توں ودھ کرن دے چکر وچ پینا چائی دا اے۔ نالے کرنا وی اللہ واسطے ای چائی دا اے۔ ایس لئی فرض سمجھ کے کرنا چائی دا اے۔ کیونکہ اے ای زندگی اے۔ انج کرن نال ای رب راضی ھوندا اے۔ ایس لئی میں اپنے لئی ' اپنے گھر والے آں تے اپنے محلہ داراں ' اپنے خاندان تے اپنے علاقے ' اپنی برادی تے اپنے صوبے ' اپنی قوم تے اپنے ملک لئی جو ھوسکے اللہ دے فضل نال کر رے آ واں۔ پہلے پہلے اپنے ' اپنے گھر تے اپنے محلہ داراں لئی کری دا سی تے جسمانی طور تے کری دا سی۔ فے عمر ودھن نال اپنے خاندان تے اپنے علاقے لئی وی کرنا شروع کردتا تے جسمانی دے نال نال مالی طور تے وی کرنا شروع کردتا۔ فے ھور عمر ' تعلیم تے تجربہ ودھن نال اپنی برادی تے اپنے صوبے لئی وی کرنا شروع کردتا تے جسمانی تے مالی دے نال نال علمی طور تے وی کرنا شروع کردتا۔ فے ھور عمر ' تعلیم تے تجربہ ودھن نال 2012 وچ سوچیا کہ اپنی قوم تے اپنے ملک لئی وی کجھ کرنا چائی دا اے۔

2012 دے آخر توں لے کے پنجابی قوم دے سیاسی شعور نوں ودھا کے پنجابی قوم نوں اک باعزت قوم بنان تے پاکستان وچ ھون والے قوماں دے سماجی فساد نوں مکا کے پاکستان نوں سماجی طور تے مستحکم ملک بنان لئی علمی کم شروع کیتا۔ کیونکہ پاکستان وچ جد سماجی معاملات ٹھیک ھون گے تے فے ای سیاسی معاملات ٹھیک ھون گے۔ جد سیاسی معاملات ٹھیک ھون گے تے فے ای انتظامی معاملات ٹھیک ھوت گے۔ جد انتظامی معاملات ٹھیک ھون گے تے فے ای معاشی معاملات ٹھیک ھوت گے۔ جد معاشی معاملات ٹھیک ھون گے تے فے ای پاکستان ترقی کرے گا۔

عرض کرن دا مطلب اے کہ؛ میں پنجابی قوم پرستی لئی جیہڑا وی کم کیتا اے۔ اے اللہ واسطے تے فرض سمجھ کے کیتا اے تے کر رے آ واں۔ ایس دا نہ میں کسے کولوں دامے ' درمے ' سخنے معاوضہ لےآ اے تے نہ لینا اے۔ ایس کم دا اجر میرا رب آپ دیووے گا۔ میں کسے نوں وی اپنے مضمون زبردستی پڑھن نوں نئیں آکھدا۔ بلکہ ھن تے ٹیگ وی کسے نوں نئیں کردا سوائے انہاں دوستاں دے جنہاں آپ آکھیا ھویا اے یا جیہڑے میرے کم وچ میرا ھتھ ونڈان ڈئے نے تے پنجابی قوم پرستی دا کم میرے پروگرام مطابق تے میرے نال رل کے کرنا چاندے نے تے اے کم کرن لئی فیس بک تے ای Punjabi Nationalist Forum بناکے پاکستان دے Zone  بناکے Zonal Organizer بنائے ھوئے نے ۔ نہ میں کسے نوں آکھدا واں کہ او ھر حال وچ میری گل منن یا جو میں آکھدا واں او انج ای کرن۔ نہ میں کوئی سیاست کرنی اے کہ پنجابیاں کولوں ووٹ لینے پے جان تے نہ میں کوئی سیاسی پارٹی بنانی اے۔ ایس لئی کسے کولوں چندہ لین یا مالی مدد دی تے لوڑ ای نئیں رہ جاندی۔ بلکہ کسے پنجابی کولوں اپنی تعریف کروان دی یا اپنے آپ نوں عوام وچ مشہور کروان دی وی لوڑ نئیں رہ جاندی۔ ایس توں علاوہ گل اے وی اے کہ؛ اک بندے وچ اینی صلاحیت نئیں ھوندی کہ او 10 توں بوھتے دکھ سکھ والے آں ' 100 توں بوھتے میل ملاقات والے آں ' 1000 توں بوھتے دعا سلام والے آں تے 10000 توں بوھتے جان پہچان والے آں نال واسطہ رکھ سکے۔ جد کہ میرے وڈیاں چھوٹے ھوندے ای اک گل دماغ وچ بٹھا چھڈی سی کہ؛ " پتر لائیے تے توڑ نبھائیے ' نئیں تے نہ لائیے "۔ اللہ دے فضل نال میرے اپنے رشتے داراں تے دوستاں یاراں چوں 10 توں بوھتے ای دکھ سکھ والے تے 100 توں بوھتے ای میل ملاقات والے اللہ نے دتے ھوئے نے۔ تے او ھین وی 30 توں 40 سال پرانے۔ جد کہ دعا سلام وی 1000 توں بوھتیاں نال ای اے پر اناں نال ھن وقت ای نئیں ملدا کہ عوامی تقریبات وچ تے تفریحی مقامات تے جایا جاوے تے پہلوں وانگوں دعا سلام ھوجایا کرے۔ جد کہ جان پہچان دا حال اے وے کہ زیادہ تر لوک ایہو جئے ای نے کہ جناں نال ایس کرکے جان پہچان اے کہ او یا تے برادری دے نے ' یا علاقہ دے نے تے یا کاروبار دے کرکے جان پہچان والے نے پر اناں نوں شکلوں ای پہچانی دا اے پر ناں یاد نئیں ریندے۔

اے گلاں میں ایس توں عرض کر ریے آ واں کہ انبکس وچ میسج کر کر کے پنجابی مینوں ایہو جئیاں گلاں آکھدے نے کہ جداں میں پنجابیاں کولوں تنخواہ ' چندہ یا مالی مدد لے کے پنجابی قوم پرستی بارے مضمون لکھ رے آ واں ' ایس کرکے اناں دا نوکر واں یا میں سیاست کرنی اے تے پنجابیاں کولوں مینوں ووٹ چائی دے نے یا میں کوئی سیاسی پارٹی بنانی اے یا عوام وچ مشہور ھونا اے یا میرے کول کوئی دکھ سکھ والا یا میل ملاقات والا یا دعا سلام والا نئیں اے تے میں فیس بک تے لبھدا پھر رے آ واں تے اوھو اے ای نے جناں نوں میں لبھ رے آ واں۔


میری دوستاں نوں گزارش اے کہ؛ جیس نے میری فرینڈ لسٹ تے رینا اے تے رووے نئیں رینا تے نہ رووے۔ تانے ' میہنے ' ٹوکاں ' آکڑ مینوں پسند نئیں۔ ایس کرکے کدی کدی جے کوئی بوھتا ای گل پے جاوے تے فے کسر میں وی نئیں چھڈا تے اوس نوں ان فرینڈ وی کر دناں واں۔ مفت وچ مضمون پڑھن نوں ملدے نے ایس کرکے جیس نے مضمون پرھنے نے پڑھے تے جیس نے نئیں پڑھنے نہ پڑھے۔ صلاح ' مشورے تے تبادلہ خیال دی حد تک ٹھیک اے پر بد تمیزی نہ کرے ' فضول بحث نہ کرے تے اپنے خیالات میرے تے مسلط کرن دی کوشش نہ کرے۔ فیس بک تے دکھ سکھ والا تے کوئی بن نئیں سکدا۔ نہ میل ملاقات والا بن سکدا اے۔ ودھ توں ودھ دعا سلام والا ای پہلے بنے گا جے کسے نے بننا ھویا تے اے اودوں ای ھوسکدا اے کہ جد ساڈا دوناں دا مزاج یا مفاد آپس وچ ملے گا۔ نئیں تے فیس بک تے اسیں صرف اپنے وچار ای اک دوجے تک اپڑا سکدے آں۔ فیس بک تے لکھاں پنجابی نے ایس کرکے سانوں چائی دا اے کہ جے کسے نال مزاج یا مفاد ملے تے آپس دی گل بات ودھایا کریے نئیں تے اک دوجے تک اپنے وچار اپڑانا ای کافی اے۔ اللہ نے جیہڑا علم مینوں دتا اے اوس نوں مضموناں دی شکل وچ عوام تائیں اپڑانا میرا فرض بن دا اے تے او فرض اللہ دے فضل نال پورا کری جا رے آ واں تے اگے رب سوھنے نے جیس نوں اے مضمون پڑھانے ھون تے اگے دا کم کرانا ھووے اوس لئی رب جانے تے او بندہ جانے۔ میں تے اوداں وی آکھیا ھویا اے کہ میرے مضمون پنجابی قوم دی امانت نے تے اپنے ناں دی مشہوری مینوں چائی دی نئیں۔ ایس لئی جیہڑا پنجابی چاوے میرے مضمون اپنے ای سمجھ کے جتھے مرضی ورتے۔ اصل مقصد پنجابیاں دا سیاسی شعور ودھانا اے تے اے کم ھونا چائی دا اے۔ ایس لئی مضموناں دے مواد تے دھیان رینا چائی دا اے نہ کہ لکھن والے دے ناں تے۔

Thursday, 14 June 2018

پاک فوج اب اپنی آئینی ذمہ داریوں پر دھیان دے رھی ھے

سیاست میں سیاستدانوں نے تو اپنا سیاسی کردار ادا کرنا ھی ھوتا ھے اس لیے ھر ملک میں سیاسی پارٹیاں ھوتی ھیں لیکن پاکستان میں فوجی افسران کو بھی سیاست کرنے کا شوق رھا ھے۔ خاص طور پر اردو بولنے والے ھندوستانی فوجی افسروں کو اور پٹھان فوجی افسروں کو زیادہ شوق رھا ھے۔ پاکستان میں چار بار مارشل لاء کا نفاظ کرکے یہ شوق پورا کرنے کی کوشش کی گئی۔ لیکن اب چونکہ فوج میں اعلیٰ درجے کے اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجر فوجی افسروں اور پٹھان فوجی افسروں کا اثر و رسوخ کم ھے اور پنجابی فوجی افسر تعداد میں زیادہ ھیں۔ اس لیے ادارے کی حیثیت سے فوج اپنی آئینی ذمہ داریوں پر زیادہ دھیان دیتی ھے اور فوج کو ادارے کے طور پر سیاست میں ملوث نہیں ھونے دینا چاھتی۔ اس لیے فوج کے اعلیٰ افسر خود کو سیاست سے دور رکھے ھوئے ھیں۔ جبکہ فوج میں نچلی سطح کے ملازمیں کی اکثریت کا تعلق پنجاب کے شمالی علاقہ اور خیبر پختونخواہ کے ھندکو علاقے سے ھے۔ یہ علاقے ن لیگ کا مظبوط گڑہ ھیں اور ان علاقوں میں عرصہ دراز سے قومی اور صوبائی اسمبلی  کے 90٪ سے زیادہ اراکین ن لیگ کے منتخب ھوتے رھے ھیں۔

البتہ فوج سے ریٹارڈ کچھ اعلیٰ اور درمیانے درجے کے فوجی افسروں کو سیاست کا شوق ھے۔ ان میں  اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجر فوجی افسروں اور پٹھان فوجی افسروں کے علاوہ پنجابی فوجی افسر بھی شامل ھیں اور یہ فوجی افسر زیادہ تر وہ ھیں جو سابق فوجی آمر ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرف کے دستِ راست رھے ھیں بلکہ ان میں سے اکثر کو سیاست میں لانے ' سیاست کا کھیل کھلانے والا بھی ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرف ھی ھے۔ لیکن چونکہ عملی سیاست کا انہیں تجربہ نہیں اور نہ اتنی صلاحیت ھے کہ سیاسی پارٹی بنا کر یا کسی سیاسی پارٹی میں شامل ھوکر سیاست کر سکیں اور عوام کی حمایت حاصل کرسکیں کیونکہ ریٹائرڈ جنرل پرویز مشرف خود سیاسی پارٹی بناکر عوام کی حمایت حاصل نہیں کر پایا۔ اس لیے فوج  کے ادارے  کے خود ساختہ ترجمان بن کر اور فوج  کے ادارے میں اپنے تعلقات کو استعمال کرکے سیاست کے میدان میں زور آزمائی کرنے میں لگے رھتے ھیں۔ جس کی وجہ سے فوج میں درمیانے درجے  کے افسر اور خاص طور پر درمیانے درجے  کے اردو بولنے والے ھندوستانی مھاجر اور پٹھان افسر ' ان سیاست کا شوق رکھنے والے اعلیٰ اور درمیانے درجے کے ریٹارڈ فوجی افسروں کی وجہ سے مقامی سطح پر سیاست میں ملوث ھوجاتے ھیں۔ بلکہ سیاستدانوں ' صحافیوں اور سرکاری افسروں میں سے بھی ذاتی مفادات رکھنے والے راضی بہ رضا یا اعلیٰ اور درمیانے درجے کے ریٹارڈ فوجی افسروں کو فوج  کے ادارے کے ترجمان یا نمائندہ سمجھ کر مغالطے میں ان اعلیٰ اور درمیانے درجے  کے ریٹارڈ فوجی افسروں کے ھم نوا یا ھم خیال بن جاتے ھیں۔

چیف آف آرمی اسٹاف کی منظوری  کے بعد فوج اگر واضح پروگرام اور پالیسی  کے ساتھ ادارے  کے طور پر نواز شریف کی مخالف ھوتی تو پہلے جنرل راحیل شریف  نے یا اب جنرل قمر جاوید باجوہ  نے نواز شریف کی کھٹیا کھڑی کردی ھوتی اور ن لیگ بھی ٹوٹ پھوٹ گئی ھوتی۔  اس لیے امکانات یہ ھی ھیں کہ چیف آف آرمی اسٹاف کے خود کو سیاست سے دور رکھنے اور آئین پر عملدرآمد کرنے کی وجہ سے نہ ملک میں مارشل لاء لگنا ھے۔ نہ ٹیکنوکریٹ حکومت بننی ھے۔ نہ انتخابات ملتوی ھونے ھیں۔ اس لیے 2013 کی طرح 2018  کے انتخاب بھی ھوجانے ھیں اور انتخاب میں چیف آف آرمی اسٹاف نے نہ تو نواز شریف کو انتخاب جتوانے  کے لیے فوج  کے ادارے کو استعمال ھونے دینا ھے اور نہ نواز شریف کو انتخاب میں ھروانے  کے لیے عمران خان ' مشرف ' زرداری  کے ساتھوں کی مدد کرنے  کے لیے فوج  کے ادارے کو استعمال ھونے دینا ھے۔ البتہ مشرف ' زرداری اور انکے دور میں حکومت میں رھنے والے با اختیار فوجی و سول سرکاری افسر اور سیاستدان ' انکے اسٹیبلشمنٹ و بیوروکیسی میں موجود ساتھی ' جنہیں اب نواز شریف خلائی مخلوق کے خطاب سے مخاطب کرتا ھے اور انکے خریدے ھوئے میڈیا ھاؤس اور انکے بھرتی کیے گئے اینکر ' صحافی ' تجزیہ نگار اپنا کام ضرور جاری رکھیں  گے۔

Tuesday, 12 June 2018

پنجابی قوم پرست پنجابیاں دے خاہ مخواہ دے دشمن کیوں ودھاندے نے؟

بلوچستان وچ بروھی دے اتے سندھ وچ سماٹ دے اتے ' جنوبی پنجاب وچ ریاستی پنجابی ' ملتانی پنجابی ' ڈیرہ والی پنجابی دے اتے بلوچ نے جد کہ کے پی کے وچ ھندکو پنجابی دے اتے پٹھان نے ' کراچی وچ پنجابی ' سماٹ ' بروھی ' ھندکو دے اتے ھندوستانی مھاجر نے اپنا سیاسی ' سماجی ' معاشی تسلط قائم کیتا ھویا اے۔ 

ایس کرکے اصل مسئلہ بلوچ ' پٹھان تے ھندوستانی مھاجر نے۔ سماٹ ' بروھی تے ھندکو مظلوم قوماں نے جد کہ بلوچ ' پٹھان تے ھندوستانی مھاجر ظالم قوماں نے۔ پنجابی قوم نے ظالم قوماں دا مقابلہ کرنا اے جد کہ مظلوم قوماں دی مدد کرنی اے۔

جد پنجابی قوم مظلوم قوماں سماٹ ' بروھی تے ھندکو دی مدد کرن لگ جاوے گی تے فے سماٹ ' بروھی تے ھندکو اپنے آپ نوں ظالم قوماں بلوچ ' پٹھان تے ھندوستانی مھاجر کولوں آزاد کروا کے پنجابی قوم نال آپ ای موڈا جوڑ لین گیاں۔

جیہڑے پنجابی بلوچاں نوں سندھی بنادے رئے نے او پنجابیاں دے خاہ مخواہ دے دشمن ودھاندے رئے نے۔ جد کہ بلوچاں نوں مظبوط کردے رئے نے۔ سندھی تے سماٹ ھوندے نے۔ سماٹ تے آپ بلوچاں دے جبر دا شکار نے۔

اودھر بروھی وی بلوچ نئیں نے۔ بروھی نوں زبردستی بلوچاں نے بلوچ بنایا ھویا اے۔ جد کہ بروھی وی بلوچاں دے جبر دا شکار نے۔ بلکہ بلوچاں دے جبر دا شکار ریاستی پنجابی ' ملتانی پنجابی ' ڈیرہ والی پنجابی وی نے جنہاں نوں بلوچ زبردستی سرائیکی بنان دے چکر وچ نے۔

Sunday, 10 June 2018

پنجابی اب بھی سندھیوں سے بلیک میل ھوں یا چولھا الگ کریں؟

پنجاب کی تقسیم کے بعد ذوالفقار علی بھٹو 1958ء میں صدر جنرل اسکندر مرزا کی کابینہ میں وزیر تجارت رھا۔ 1958ء تا 1960ء صدر جنرل ایوب خان کی کابینہ میں وزیر واٹر اینڈ پاور ' کیمنیوکیشن ' انڈسٹری رھا اور 1960 میں سندھی ذوالفقار علی بھٹو اور پٹھان جنرل ایوب خان نے بھارت کے ساتھ سندھ طاس کا معاھدہ کرکے پنجاب کے دریا ستلج اور راوی بھارت کو بیچ دیے۔ اب پنجاب کو دوبارہ ایک کرکے ھی پنجاب کے دریا ستلج اور راوی دوبارہ کھولے جاسکتے ھیں۔

نہ وہ پنجاب رھا۔ نہ وہ دریا رھے اور نہ وہ انگریز رھے جنہوں نے 1945 میں واٹر ٹریٹی کی۔ پنجاب 1947 میں تقسیم ھوگیا۔ پنجاب کے دریا سندھی ذوالفقار علی بھٹو اور پٹھان جنرل ایوب خان نے بھارت کو بیچ دیے لیکن سندھی 1945 کی واٹر ٹریٹی کا حوالہ دے دے کر پنجاب کو پانی دینے کے لیے مجبور کرتے ھیں بلکہ پنجاب سے پانی لیکر ایک تو پنجاب کے پانی پر پلتے ھیں اور دوسرا پنجابیوں پر سندھ کا پانی چوری کرنے کا الزام لگا لگا کر پنجابیوں کو گالیاں بھی دیتے ھیں۔ تیسرا پنجابیوں کو پنجاب میں اپنے ھی دریا پر کالاباغ ڈیم بھی نہیں بنانے دیتے۔ سندھی دعویٰ کرتے ھیں کہ بین الاقوامی قانون کے مطابق نچلے حصے کے باشندوں کا دریا کے پانی پر پہلا حق ھوتا ھے۔

سندھیوں کا یہ پروپیگنڈہ جھوٹا ھے کہ دریا کے پانی یا دریا کے نچلے حصے کے لئے ایک بین الاقوامی قانون ھے۔ جبکہ دریا کے پانی یا دریا کے نچلے حصے کے لئے کوئی بین الاقوامی قانون موجود نہیں ھے۔ دریا کے پانی کو اب بھی جس ملک میں دریا ھو اس ملک کے اپنے بنائے گئے قانون کے مطابق کنٹرول کیا جاتا ھے۔ البتہ بین الاقوامی دریاؤں کے پانی کے استعمال پر تجویز کیے گئے قواعد جیسا کہ ھیلسنکی قواعد اور اکیسویں  صدی میں پانی کی حفاظت پر ھیگ اعلامیہ کے تجویز کردہ دستاویزات موجود ھیں۔

پنجابی اب سندھیوں کے رویہ سے بہت تنگ آچکے ھیں۔ اٹھارویں ترمیم کے بعد پاکستان ایک فیڈریشن نہیں رھا بلکہ عملی طور پر ایک کنفیڈریشن بن چکا ھے۔ اس لیے اس کنفیڈریشن میں مزید ترمیم کرکے پنجاب اور سندھ اپنے اپنے چولھے الگ کریں اور روز روز کی چخ چخ سے خود کو باھر نکالیں۔ پنجابی نہ تو بنگالیوں کے الگ ھونے کے بعد بھوکے مر رھے ھیں اور نہ سندھیوں کے الگ ھونے کے بعد بھوکے مریں گے۔ پنجابیوں کو اب صرف پنجاب پر دھیان دینا چاھیے۔ پنجاب میں اپنی علمی ' ذھنی ' جسمانی اور مالی سرمایہ کاری کرنی چاھیے۔ پنجاب کی ذراعت ' پنجاب کی صنعت ' پنجاب کی تجارت ' پنجاب میں ھنرمندی کے پیشوں میں اپنی صلاحیت مزید بڑھانی چاھیے۔

سندھیوں نے سماجی ' سیاسی ' معاشی ' انتظامی معاملات کے بارے میں پنجاب اور پنجابی قوم کے خلاف اس قدر جھوٹے مفروضے بنائے ھوئے ھیں کہ ان میں سے سندھیوں کو نکالنا اب مشکل ھے۔ پنجابی اب سندھیوں سے ذھنی طور پر تو الگ ھو ھی چکے ھیں۔ اس لیے ھی پنجابیوں اور سندھیوں کے درمیان نہ سماجی مراسم رھے ھیں اور نہ سیاسی مراسم رھے ھیں۔ لیکن تھوڑے بہت معاشی اور انتظامی معاملات کے بارے میں جو مراسم بچے ھیں وہ بھی ختم کریں۔ تاکہ پنجاب کو نہ سندھ کو پانی دینے کی ضرورت رھے اور نہ پنجاب کو روز روز چور ھونے کے طعنے اور بات بے بات گالیاں کھانی پڑیں۔

وفاق اس وقت سندھ کے گیس ' تیل اور کوئلہ کو پیسے لے کر پنجابیوں کو فروخت کرتا ھے۔ وفاق کی طرف سے سندھ کو گیس ' تیل اور کوئلہ کی مد میں رائلٹی بھی دی جاتی ھے جبکہ پنجاب میں گیس ' تیل اور کوئلہ کی کھپت زیادہ ھونے کی وجہ سے وفاق ' پنجاب سے گیس ' تیل اور کوئلہ پر ٹیکس ڈیوٹی کی مد میں روینو جمع کرکے این ایف سی کے نام پر سندھ ' خیبر پختونخواہ اور بلوچستان میں تقسیم بھی کردیتا ھے۔

اسکے باوجود پنجابیوں کو طعنے دیے جاتے ھیں کہ پنجاب تو سندھ کے  گیس ' تیل اور کوئلہ کا محتاج ھے۔ جبکہ پنجابیوں کو گالیاں دی جاتی ھیں کہ پنجابی ' سندھ کے قدرتی وسائل گیس ' تیل اور کوئلہ لوٹ رھے ھیں۔

 گیس ' تیل اور کوئلہ سندھ کے قدرتی وسائل ھیں۔ اس لیے  گیس ' تیل اور کوئلہ کو سندھ پہلے استعمال کرے۔ سندھ کے استعمال کرنے کے بعد اگر  گیس ' تیل اور کوئلہ بچ جائے تو دوسرے صوبوں کو فروخت کرے۔

دریا کا پانی پنجاب کا قدرتی وسیلہ ھے۔ اس لیے دریا کے پانی کو پنجاب پہلے استعمال کرے۔ پنجاب کے استعمال کرنے کے بعد اگر  دریا کا پانی بچ جائے تو دوسرے صوبوں کو فروخت کرے۔

ویسے پنجاب اگر پنجاب کے دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر  لے تو پنجاب کو سندھ کے قدرتی وسائل گیس ' تیل اور کوئلہ کی ضرورت ھی نہیں پڑنی۔ پنجاب کے پاس اپنا دریاؤں کا پانی ھے جو قدرتی وسائل کے طور پر کافی ھے ۔

1۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر پنجاب کی ان زمینوں کو جو 7 لاکھ سے زیادہ ٹیوب ویل چلا کر سیراب کی جاتی ھیں ' براہِ راست دریا کے پانی سے سیراب کر سکتا ھے۔ جس سے فصل کی پیداوار  پر خرچے میں کمی آئے گی۔

2۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر تھل اور چولستان کی لاکھوں ایکڑ زمین آباد کر سکتا  ھے ' جو پنجاب کے قدرتی وسیلہ ' پنجاب کے پانی کو سندھ کو دے دیے جانے کی وجہ سے اب تک غیر آباد پڑی ھے۔

3۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر کے پنجاب میں بجلی کے بحران پر قابو پا سکتا ھے ۔

4۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر کے سندھ کے گیس ' تیل اور کوئلہ کو ایندھن کے طور پر بجلی بنانے ' زمینوں کو سیراب کرنے کے لیے ٹیوب ویل چلانے اور انڈسٹری چلانے میں استعمال کرنے سے جان چھڑا سکتا ھے۔

5۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر کے پنجاب کی انڈسٹری کو وافر مقدار میں بجلی فراھم کر کے کراچی میں جو پنجابیوں کی انڈسٹری بچی ھے ' اس کو بھی پنجاب منتقل کر سکتا ھے۔

6۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر کے پنجاب کی ضرورت  کے لیے پنجاب کی انڈسٹری کے ذریعہ ھی پرڈکشن کر کے سندھ کی انڈسٹری کی پرڈکشن کو ' جو پنجاب میں مارکیٹنگ کی جاتی ھے ' اس سے جان چھڑا کر پنجاب کے پیسے کو پنجاب سے باھر جانے سے روک سکتا ھے۔ 

7۔ پنجاب دریاؤں پر ڈیم بنا کر دریا کے پانی سے بجلی پیدا کر کے بجلی میں خود کفیل ھو کر  سستے نرخوں پر بجلی فراھم کر کے پنجاب کو ایگریکلچرل اور انڈسٹریل پروڈکشن کا مرکز بنا کر ایگریکلچرل اور انڈسٹریل پروڈکٹس کو ایکسپورٹ کر کے پنجاب میں روز مرہ کی ضرورت  کے لیے عالمی مارکیٹ سے گیس ' تیل اور کوئلہ امپورٹ کر سکتا ھے۔ جس سے سندھ کے گیس ' تیل اور کوئلہ سے بھی جان چھوٹ جائے گی  اور پنجابیوں کو سندھیوں کی گالیاں کھانے سے بھی نجات مل جائے گی۔

Rescue from Kurdish background infiltrators and invaders.

Brahvi in Balochistan, Sammat in Sindh, Multani Punjabi, Derawali Punjabi, Riyasti Punjabi in South Punjab are victims of Baloch Invaders and infiltrators.

Pakistan has 3% Baloch population. As the Baloch are the residents of rural areas of Baluchistan, Sindh and South Punjab. Therefore, out of 50 biggest cities of Pakistan, none of the city is under the social, economic and political domination of the Baloch.

But, due to the social, economic and political ineffectiveness of Brahvi in Balochistan, Sammat in Sindh, Multani Punjabi, Derawali Punjabi, Riyasti Punjabi in South Punjab, they have a dominant role in rural areas of Baluchistan, Sindh and South Punjab.

In Balochistan, socially, economically and politically the Baloch are dominating the actual and original inhabitants of Baluchistan, the Brahvi.

In rural Sindh, socially, economically and politically the Baloch are dominating the actual and original inhabitants of Sindh, the Sammat.

In South Punjab, socially, economically and politically the Baloch are dominating the actual and original inhabitants of South Punjab, the Multani Punjabi, Derawali Punjabi, Riyasti Punjabi.

Therefore, the Punjabi nation has the primary duty and moral obligation;

1. To rescue the Brahvi nation from the social, economic and political domination of Kurdish background infiltrators and invaders, those claims themselves as Baloch, by socially, economically and politically strengthen the Brahvi nation in Baluchistan.

2. To rescue the Sammat nation from the social, economic and political domination of Kurdish background infiltrators and invaders, those claims themselves as Sindhi-Baloch, by socially, economically and politically strengthen the Sammat nation in Sindh.

3. To rescue the Multani Punjabi, Derawali Punjabi, Riyasti Punjabi from the social, economic and political domination of Kurdish background infiltrators and invaders, those claims themselves as Saraiki, by socially, economically and politically strengthen the Multani Punjabi, Derawali Punjabi, Riyasti Punjabi in South Punjab.

Saturday, 9 June 2018

ھماری مہاجروں کی فطرت کیا ھے؟

ھم ھندوستان میں غربت اور خوف کی زندگی گزارتے تھے۔ پاکستان بنا تو یہاں پر آئے۔ جب ھم یہاں پہنچے تو ھمارے تن پر کپڑے’ پائوں میں چپل اور پیٹ میں روٹی نہیں تھی۔ یہاں کے لوگوں نے یہ سب کچھ فوراً ھمیں دیا۔ ھم نے یہاں پہنچ کرجائداد کے جھوٹے کلیم داخل کروائے اور پھر سندھ کے تمام بڑے شہروں میں گھر’ دوکان’ مکان’ زمین اور کاروبار حاصل کئے۔ جو پڑھے لکھے مہاجرین تھے انکو بہت ساری نوکریاں بھی ملیں۔ یہاں کے لوگوں نے ھمیں اپنے سینے سے لگایا اپنے بند پڑے ھوئے اضافی گھر و کاروبار ھمارے حوالے کئے۔ اس طرح قربانی کی اعلیٰ مثال قائم کی۔ یہاں کے لوگ اھلِ بیت کی شان اور محبت میں بھی بہت آگے تھے۔ ھم نے اس بات کا بھی فائدہ اٹھایا اور زیادہ تر جعلی سید بن گئے۔ پھر تو جیسے ھماری پانچوں انگلیاں گھی میں اور سر کڑھائی میں تھا۔

ھمیں صرف اردو اور اپنی اپنی مادری زبان بولنا آتی تھی۔ مگر یہاں کے لوگوں نے ھمیں سندھی زبان سیکھنے پر کبھی بھی مجبور نہیں کیا۔ بلکہ سارے سندھی اردو زبان بولنا سیکھ گئے۔ مگر ھمیں آج بھی سندھی زبان سمجھ میں نہیں آتی۔ بلکہ ھم تو اس سے شدید نفرت کرتے ھیں۔ ھماری سب سے بڑی سیاست یہ ھے کہ ھم ستر سالوں سے مہاجر ھیں اور پاکستانی نہیں بنے۔ مگر مقامی لوگوں کو کہتے ھیں کہ پاکستانی بن جائو۔ آج سندھ کے تمام چھوٹے بڑے شہر اور ان میں موجود گھر و کاروبار ' نوکریاں اور بہت کچھ ھمارے پاس ھے۔ مگر پھر بھی ھم مظلومیت کا رونا روتے ھیں۔ تاکہ مزید اگر کچھ مل سکتا ھے تو لے لیں۔ حیرت کی بات تو یہ ھے کہ ھمیں مہاجر قوم کا پکا نام دینے والا شخص خود دس سالوں میں برطانیہ کا شہری بن گیا۔ مگر ھم آج بھی مہاجر ھیں۔ اور تو اور ھمارے اس لیڈر نے ھماری قوم کی بیٹیوں کو بھی اس قابل نہ سمجھا کہ ان سے شادی کرے۔ اس نے شادی بھی کی تو بلوچوں میں سے کی۔ ھمارا لیڈر ھمیشہ سے اس کوشش میں رھا کہ کسی طرح پاکستان کو توڑا جائے اور پھر اپنے آبائی ملک ھندوستان سے مل جائیں۔ مگر یہ کم بخت سندھی’’ بلوچ’ پنجابی اور پٹھان ھماری اس سازش کو سمجھ گئے ھیں اور ھمیں ایسا کرنے نہیں دیں گے۔

ھمیں یہ بھی پتہ ھے کہ اندرون سندھ کے لوگ بہت ہی کسم پرسی کی زندگی گزارتے ھیں۔ ان لوگوں کے پاس پینے کا صاف پانی تک میسر نہیں ھے۔ تعلیم نہیں ھے۔ اسپتال نہیں ھیں۔ ھمیں یہ بھی پتہ ھے کہ اندرون سندھ کے لوگ بہت بری زندگی گذارتے ھیں اور ھم لوگ ان کے مقابلے میں زیادہ بہتر اور آرام دہ زندگی شہروں میں گزار رھے ھیں۔ جہاں زندگی کی تمام تر سھولیات موجود ھیں۔ ھم دیہات میں جاکر رھیں گے بھی نہیں۔ مگر دھرتی کے مالکان سے انکے گاؤں ' دیہات بھی خالی کروانا چاھتے ھیں۔ بس ھمیں ایسا کرنے میں مزا آئے گا۔ کیونکہ لوٹ مار اور احسان فراموشی تو ھمارے خمیر میں شامل ھے۔ ھمیں یہ بھی پتہ کہ ھمیں سندھ میں کوئی تکلیف اور پریشانی نہیں ھے۔ مگر پھر بھی مظلومیت کا رونا روئیں گے۔

ھم پاکستان کی واحد قوم ھیں جو ستر سالوں سے مہاجر ھیں۔ حالانکہ ھماری چوتھی نسل یہاں چل اور پل رھی ھے۔ ھم پاکستان کی واحد قوم ھیں جنھوں نے قومیت کی بنیاد پر کسی سیاسی جماعت کی بنیاد رکھی اور مہاجر قومی موومنٹ بنائی۔ یہ بھی سن لیں کہ ھم نے لسانیت کی آخری حد کو چھوتے ھوئے مہاجر قومی موومنٹ کے تمام نمائندے کامیاب کروائے اور ان کو اسمبلیوں میں بھیجا اور لسانیات کا الزام ان سندھیوں پر لگایا جنھوں نے آج تک ایک بھی قوم پرست سیاسی نمائندہ کسی بھی اسیمبلی میں نہیں بھیجا۔ ھم لوگ بہت ھی امن پسند قوم ھیں اسی لئے ھمارے جھگڑے ھمیشہ سندھی ' بلوچی ' پنجابی اور پٹھان سے چلتے رھتے ھیں۔ ھماری قوم سے صدر ' وزیراعظم اور آرمی چیف تک بنے۔ صوبائی اور وفاقی وزراء بنے۔ مگر پاکستان نے پھر بھی ھمیں کچھ نہیں دیا۔

ھماری یہ دیرینہ خواھش ھے کہ پاکستان میں موجود تمام قومیتیں اپنی اپنی زبان کو چھوڑ کر صرف اور صرف اردو زبان کا استعمال کریں۔ حالانکہ ھمیں یہ بھی پتہ ھے کہ یہ سب لوگ پہلے سے ھی اردو زبان بولتے اور سمجھتے ھیں۔ جبکہ ھمیں ان کی کوئی بھی زبان نہ بولنا آتی ھے اور نہ ھی سمجھ آتی ھے۔ مگر پھر بھی یہ سب لوگ قوم پرست اور تعصبی ھیں۔ اگر کہیں دس سندھی’ بلوچی’ پنجابی یا پٹھان کھڑے ھونگے تو وہ سب اس ایک اردو بھائی کی وجہ سے اور اس سے یکجہتی کے لئے اردو زبان بولنا شروع کر دیں گے۔ مگر ھمیں آج تک سندھی یا کوئی اور زبان بولنا نہیں آئی۔

ھم اپنے لیڈر کے پیچھے چلتے ھوئے سندھ دھرتی ' جس نے ھمیں اور ھمارے آباؤ اجداد کو پناہ دی ' اس میں الگ صوبہ بنانے کی بات کرتے ھیں۔ جبکہ ھمیں یہ بھی پتہ ھے کہ ایسا ممکن نہیں ھے۔ مگر ھماری فطرت میں جو تعصب اور بغض بھرا ھوا ھے۔ اسکو کہیں تو ظاھر کرنا ھی ھے۔ ھمیں تو یہ بھی پتہ ھے کہ اردو ھرگز ھماری زبان نہیں تھی۔ بلکہ ھمارے بڑے تو ھندوستان میں اپنی اپنی مادری زبان بولتے تھے۔ ھمیں یہ بھی پتہ ھے کہ اردو زبان ترکی’ فارسی’ عربی اور سندھی زبان وغیرہ سے ملکر بنی ھے۔ مگر میں نہ مانوں والی بات ھے۔ جیسے ھی الیکشن قریب آئیں گے ھمیں پھر سندھی ' مہاجر کی بنیاد پر الیکشن لڑنا ھوگا اور یوں سیاست چلتی رھے گی۔ (انور مقصود)

پنجابی بولن دے بجائے اردو نوں پنجابی کیوں ورتدے نے؟

پنجابی زبان دی پرورش صوفی بزرگاں بابا فرید ' بابا نانک ' شاہ حسین ' سلطان باہو ' بلھے شاہ ' وارث شاہ ' خواجہ غلام فرید ' میاں محمد بخش کیتی۔ ایس لئی پنجابی زبان دا پس منظر روحانی ھون دے کرکے پنجابی زبان وچ علم ' حکمت تے دانش دے خزانے نے جیہڑے اخلاقی کردار نوں بہتر کرن تے روحانی نشو نما دی صلاحیت رکھدے  نے۔

پنجابی زبان ھر پنجابی بولنا جاندا اے۔ جے کسے نوں پنجابی بولنی ای نئیں آندی تے فے او پنجابی کیس طراں ھو سکدا اے؟ اے ھور گل اے کہ پنجابی اپنی ماں بولی گھٹ بولدے نے تے اردو بوھتی ورتدے ریندے نے۔ ای کوئی چنگی گل نئیں اے۔ پنجابی نوں اپنی ماں بولی ای بولنی چائی دی اے تے اردو اودوں ای ورتنی چائی دی اے جداں لوڑ پین تے پنجابی نوں انگریزی یا کوئی ھور زبان ورتنی پیندی اے۔ پر پنجابیاں وچ اردو ورتن دے بجائے اپنی ماں بولی بولن دی عادت اودوں ای پائی جاسکدی اے جد پنجابیاں دا سیاسی شعور ودھدے ' پنجابیاں دا ذھن پنجابی بن جاوے تے پنجابیاں وچ قوم پرستی جاگ جاوے۔

سیاست دا مقصد ھوندا اے کہ؛ اپنی قوم دے سماجی تے معاشی جد کہ اپنی دھرتی دے انتظامی تے اقتصادی مسئلے حل کیتے جان۔ جہدے لئی لوڑ ھوندی اے کہ اپنی قوم نوں قوم پرست بنایا جاوے۔ ایس لئی پنجابیاں کولوں پنجابی زبان وچ نریاں جگتاں تے شعر و شاعری کروان دے بجائے پنجابیاں دا سیاسی شعور ودھایا جاوے ' پنجابیاں دا ذھن پنجابی بنایا جاوے تے پنجابیاں وچ قوم پرستی جگائی جاوے۔ وقت لنگھن نال جیویں جیویں پنجایاں وچ سیاسی شعور ودھدا جاوے گا اوویں اوویں پنجابیاں دا ذھن وی پنجابی بندا جاووے گا تے پنجابی آپ ای پنجابی قوم پرست بندے جان گے۔ فے پنجابی دوجی زبان دے بجائے اپنی ماں بولی وی آپ ای بوھتی بولن لگ پین گے تے اردو ورتنا چھڈ دین گے۔

پنجایاں وچ سیاسی شعور ودھائے بغیر ' پنجابیاں دے ذھن نوں پنجابی بنا کے پنجابیاں نوں پنجابی قوم پرست بنائے بغیر ' پنجابیاں نوں پنجابیاں دے سماجی تے معاشی ' پنجاب دے انتظامی تے اقتصادی مسئلے حل کروان تے لائے بغیر ' پنجابیاں نوں نرا پنجابی بولن تے مجبور کرن نال ' پنجابیاں کولوں پنجابی زبان وچ جگتاں تے شعر و شاعری کروان نال ' نہ پنجابی نوں سماجی تے معاشی فائدہ ھونا اے۔ نہ پنجاب نوں انتظامی تے اقتصادی فائدہ ھونا اے۔ نہ پنجایاں وچ سیاسی شعور ودھنا اے۔ نہ پنجابیاں دے ذھن پنجابی بننے نے۔ نہ پنجابیاں وچ پنجابی قوم پرستی جاگنی اے۔ نہ پنجابیاں نے دوجی زبان دے بجائے اپنی ماں بولی ای بوھتی بولن لگ پینا اے۔ نہ اردو نوں ورتنا چھڈنا اے۔

Urdu-Speaking UP-ite Liaquat Ali Khan was born in Karnal.

Liaquat Ali Khan was an Urdu-speaking of United Province but he born in Karnal, Eastern Punjab of India, on 1 October 1895, because Liaquat Ali Khan family was one of the few landlords whose property, including the jagir of 300 villages in total, 240 villages were in UP and 60 villages in Karnal, expanded across both eastern Punjab and the United Province.

Father of Liaquat Ali Khan, Nawab Rustam Ali Khan, possessed the titles of Rukun-al-Daulah, Shamsher Jang, and Nawab Bahadur, by the British Government who had wide respect for his family.

The family-owned pre-eminence to timely support given by Liaquat's grandfather Nawab Ahmed Ali Khan in Karnal to the British army during the 1857 rebellion. (Source-Lepel Griffin's Punjab Chiefs Volume One).

Liaquat Ali Khan family had strong ties with the British Government and the senior British government officers were usually visited at his big and wide mansion at their time of visit.

Liaquat Ali Khan was educated at Aligarh, Allahabad, and Exeter College, Oxford and he entered politics in 1923, being elected first to the provincial legislature of the United Provinces and then to the central legislative assembly. He joined the Muslim League and soon became closely associated with Muhammad Ali Jinnah.

Liaquat Ali Khan initially campaigned in the 1926 elections from the rural Muslim constituency of Muzaffarnagar for the provisional legislative council. After taking the oath, Liaquat Ali Khan embarked on his parliamentary career, representing the United Provinces at the Legislative Council in 1926. In 1932, he was unanimously elected Deputy President of UP Legislative Council.

Liaquat Ali Khan remained the elected member of the UP Legislative Council until 1940 when he was proceeding to the election of the Central Legislative Assembly.

In 1945-46, mass elections were held in India and Liaquat Ali Khan won the Central Legislature election from the Meerut Constituency in the United Provinces.