Saturday, 4 March 2017

میرے مضامین لکھنے کا مقصد نفرت پھیلانا نہیں سبق سکھانا ھے۔

دوستو !!! میرے مضامین لکھنے کا مقصد نہ نفرت پھیلانا ھے اور نہ کسی کے ساتھ ظلم اور زیادتی کرنا ھے۔ میرا مقصد بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانیوں کو سبق سکھانا ھے کہ فتنہ اور فساد نہ کریں۔ پیار و محبت کے ساتھ ' امن و امان کے ماحول میں زندگی گذاریں۔ غیبت ' تہمت اور ابہام کو بنیاد بنا کر عیاری و مکاری کے ذریعے اپنے دنیاوی مفادات حاصل کرنے کے بجائے حق و انصاف کا راستہ اختیار کریں۔ اپنے حقوق کے حصول اور باھمی اختلافات کے لیے اخلاق و قانون کے دائرے میں رھتے ھوئے معاملات کو طے کریں۔

پنجابی پاکستان کی سب سے بڑی اور مظبوط قوم ھے۔ اس لیے پنجابی نے بھی وھی راستہ اختیار کیا جو بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانیوں کے سیاستدانوں اور صحافیوں کی سازشوں اور شرارتوں کی وجہ سے کچھ بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانیوں نے طویل عرصے سے اختیار کیا ھوا ھے ' تو بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی بڑے بحران میں مبتلا ھو جائیں گے۔

اللہ تعالی نے مجھے اتنی توفیق دی ھوئی ھے کہ صرف مضامیں لکھنا ھی نہیں بلکہ عملی طور پر تنظیم سازی کرکے پنجابی عوام کو بھی عملی طور متحد ' منظم اور متحرک کرسکتا ھوں لیکن اس سے بات بہت بڑہ جائے گی اور پنجابی بھی وہ ھی کام شروع کردیں گے جو عرصہ دراز سے بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی کرتے چلے آرھے ھیں۔

دوستو !!! اس موضوع پر انشا اللہ جلد تفصیلی مضمون لکھوں گا اور مزید تفصیل سے بتاؤں گا کہ میں نے پنجاب ' پنجابی اور پنجابیت بارے مضامین لکھنے کیوں شروع کیے؟ فی الحال میری پنجابیوں سے عرض ھے کہ اپنے گھریلو اور کاروباری امور پر دھیان دینے کے ساتھ ساتھ اپنی قوم کی عزت ' حقوق اور تحفظ کے لیے محنت اور کوششش کریں لیکن کسی بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی کی بے عزتی ' حق تلفی اور زیادتی نہ کی جائے۔ اپنے بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی دوستوں ' محلے داروں ' میل ملاقات والوں ' جاننے والوں ' حتیٰ کہ اجنبی بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانیوں کو بھی پہلے انسان سمجھیں اور انکے ساتھ نیک سلوک کریں۔ بلکہ جہاں بس میں ھو وھاں مدد اور تعاون بھی کریں۔

اللہ نے چاھا تو فتنہ و فساد کرنے والے بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی سیاستدان اور صحافی خود ھی اپنے کیے ھوئے عملوں کا صلہ پالیں گے اور ان بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی سیاستدانوں اور صحافیوں کی نظریاتی دھشتگردی کا مقابلہ کرنے کے لیے میرے مضامین لکھنے کا سلسلہ بھی جاری رھے گا۔ تاکہ عام پنجابی کو سیاسی شعور حاصل ھوتا رھے جبکہ عام بلوچ ' پٹھان اور اردو بولنے والے ھندوستانی کو بھی تصویر کا دوسرا رخ دیکھنے کو ملتا رھے تاکہ وہ اپنی قوم کے سیاستدانوں اور صحافیوں کے ھاتھوں گمراہ ھونے سے بچ سکیں۔